پاکستان کا کلین سویپ، عماد وسیم پھر چھاگئے

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

پاکستان نے ویسٹ انڈیز کو ابوظہبی میں تیسرے اور آخری ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میں آٹھ وکٹوں سے شکست دے کر کلین سویپ کرلیا۔

یہ پہلا موقع ہے کہ پاکستان نے تین ٹی ٹوئنٹی میچوں کی سیریز میں کلین سویپ کیا ہے۔

سرفراز احمد نے ٹاس جیت کر پہلے ویسٹ انڈیز کو بیٹنگ دی لیکن ویسٹ انڈین ٹیم مقررہ بیس اوورز میں پانچ وکٹوں پر صرف103 رنز بنانے میں کامیاب ہوسکی جو اس سیریز میں اس کا سب سے کم اسکور ہے۔

پاکستان نے مطلوبہ اسکور سولہویں اوور میں دو وکٹوں کے نقصان پر پورا کرلیا۔

ویسٹ انڈین ٹاپ آرڈر بیٹنگ ایک بار پھر لیفٹ آرم اسپنر عماد وسیم کے رحم و کرم پر رہی جنہوں نے صرف 21 رنز دے کر تین وکٹیں حاصل کیں۔

اس سیریز میں انھوں نے نو وکٹیں حاصل کیں۔

عماد وسیم کی 15 ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میچوں میں وکٹوں کی تعداد 21 ہوگئی ہے جن میں سے دس بولڈ اور چار ایل بی ڈبلیو ہیں۔

دونوں ٹیمیں دو دو تبدیلیوں کے ساتھ میدان میں اتریں۔ پاکستان نے بائیں ہاتھ کے تیز بولر رومان رئیس کو پہلی بار ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل کھیلنے کا موقع فراہم کیا۔ ٹیم میں محمد عامر کی بھی واپسی ہوئی۔

اتفاق سے پاکستان کا ریگولر بولنگ اٹیک بائیں ہاتھ کے بولرز پر مشتمل تھا۔

عماد وسیم نے اپنے دوسرے ہی اوور میں جانسن چارلس اور والٹن کو لگاتار گیندوں پر بولڈ کردیا۔

ڈھائی سال بعد دوبارہ ٹیم میں واپس آنے والے والٹن کے لیے یہ انتہائی مایوس کن لمحہ تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty

پانچویں اوورمیں فلیچر کے رن آؤٹ ہونے پر ویسٹ انڈیز کی ٹیم کا اسکور صرف 17 تھا اور وہ ایک بار پھر پاور پلے میں جارحانہ بیٹنگ کے بجائے اپنے بچاؤ کی جنگ میں مصروف ہوچکی تھی۔

تجربہ کار مارلن سیمیولز نے اگرچہ ایک اینڈ سنبھالے رکھا لیکن حالات نے انہیں بھی کھل کر بیٹنگ کا موقع نہیں دیا۔دوسری جانب عماد وسیم براوو کو بولڈ کرکے ایک اور گھاؤ لگاگئے۔

نکوس پورن نے محمد نواز کو ایک چھکا لگایا لیکن اسی اوور میں ایک اور چھکے کی کوشش میں وہ ڈیپ مڈ وکٹ باؤنڈری پر شعیب ملک کے ہاتھوں کیچ ہوگئے۔

ویسٹ انڈیز نے 13ویں اوور میں 66 رنز پر پانچویں وکٹ گرنے کے بعد اگرچہ مزید وکٹ نہیں گنوائی لیکن سیمیولز اور پولارڈ 44 گیندوں کا سامنا کرتے ہوئے صرف ایک چوکا لگانے میں کامیاب ہوسکے۔ سیمیولز 59 گیندیں کھیل کر تین چوکوں کی مدد سے 42 رنز بناکر ناٹ آؤٹ رہے ۔

تینوں تیز بولرز اگرچہ وکٹ سے محروم رہے تاہم محمد عامر اور سہیل تنویر کے مقابلے میں اپنا پہلا میچ کھیلنے والے رومان رئیس نے تیز اور سلو گیندوں کے امتزاج سے متاثر کن بولنگ کی اور تین اوورز میں صرف دس رنز دیے۔

پاکستان کی اننگز میں شرجیل خان لگاتار تیسرے میچ میں قابل ذکر کارکردگی دکھائے بغیر 11 رنز پر اپنا پہلا ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل کھیلنے والے کیزرک ولیمز کی پہلی وکٹ بن گئے جنھوں نے اسی اوور میں خالد لطیف کو بھی اکیس کے انفرادی اسکور پر آؤٹ کردیا۔

بابر اعظم اور شعیب ملک کی پراعتماد بیٹنگ نے ویسٹ انڈیز کو مزید کسی کامیابی سے دور رکھتے ہوئے پاکستان کی جیت پر مہرتصدیق ثبت کردی۔

شعیب ملک چار چوکوں اور ایک چھکے کی مدد سے تنتالیس رنز بناکر ناٹ آؤٹ رہے ۔ بابراعظم ستائیس رنز پر ناٹ آؤٹ تھے ۔

ان دونوں نے تیسری وکٹ کی ناقابل شکست شراکت میں اڑسٹھ رنز کا اضافہ کیا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں