جرمنی میں بم حملے کی منصوبہ بندی کے الزام میں گرفتار شامی پناہ گزین کی خودکشی

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption جبار کو گذشتہ برس جرمنی آنے پر پناہ دی گئی تھی

جرمنی میں حکام کے مطابق لائپسِگ شہر کی جیل میں برلن ایئر پورٹ پر حملے کی منصوبہ بندی کے الزام میں گرفتار شامی پناہ گزین نے خودکشی کر لی ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ شامی پناہ گزین جبار البکر جیل کے سیل میں مردہ پائے گئے اور اس واقعے کی تحقیقات کا آغاز کر دیا گیا ہے۔

سنیچر کو پولیس نے جبار البکر کے فلیٹ پر چھاپہ مارا تھا لیکن وہ فرار ہونے میں کامیاب ہو گئے اور پیر کو تین شامی پناہ گزینوں نے جبار البکر کو پولیس کے حوالے کیا تھا۔

گرفتاری کے بعد سے 22 سالہ جبار بھوک ہڑتال پر تھے اور پولیس اہلکار ان پر مسلسل نظر رکھے ہوئے تھے۔

جبار کو گذشتہ برس جرمنی آنے پر پناہ دی گئی تھی۔

جرمنی پولیس جبار کی کئی ماہ سے نگرانی کر رہی تھی اور انٹیلیجنس حکام کو ایسی اطلاعات ملی تھیں کہ وہ ممکنہ طور پر کسی حملے کی منصوبہ بندی کر رہا ہے جس پر حکام نے مشرقی ریاست زاکسن میں پولیس کو الرٹ کیا۔

حکام کے مطابق انھیں گذشتہ جمعرات کو معلوم ہوا کہ مشتبہ منصوبہ ساز نے انٹرنیٹ کے ذریعے بم تیار کرنے کے بارے میں ہدایات حاصل کی تھیں اور اس کے دھماکہ خیز مواد بھی حاصل کر لیا ہے۔

پولیس نے جبار کے فلیٹ سے چھاپہ مارا تو وہاں سے 1.5 کلوگرام گھریلو سطح پر تیار کیے جانے والا دھماکہ خیز مواد ملا۔ اسی قسم کا مواد شدت پسندوں نے گذشتہ برس پیرس حملوں میں استعمال کیا تھا اور پولیس حکام کے مطابق یہ مواد انتہائی خطرناک ہے۔

جبار فرار ہو کر لایپزیگ پہنچ گئے اور وہاں شامی پناہ گزینوں سے مدد طلب کی۔

ان شامی پناہ گزینوں نے پولیس کو بتایا کہ انھیں ایک ملزم کے فرار ہونے کے بارے میں معلوم ہوا تھا اور جب وہ ان کے پاس آیا تو اسے رسیوں سے باندھ دیا۔

پولیس نے اس اطلاع کے بعد جبار کو گرفتار کر لیا جبکہ تینوں شامی پناہ گزینوں کو انعامات دینے کے بارے میں کہا جا رہا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption جبار کے فلیٹ میں پولیس کی کارروائی

حکام کا خیال ہے کہ جبار کا تعلق خود کو دولتِ اسلامیہ کہنے والی شدت پسند تنظیم ہے لیکن اب اس واقعے کے بعد پولیس کو جبار کے مکمل منصوبے اور ممکنہ طور پر دیگر ساتھیوں کے بارے میں معلومات حاصل کرنا خاصا مشکل ہو جائے گا۔

اسی بارے میں