بغداد میں خود کش حملہ، 30 افراد ہلاک

بغداد تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption حملہ دن کے کھانے کے دوران کیا گیا

عراق کے حکام کا کہنا ہے کہ دارالحکومت بغداد میں شیعہ برداری پر کیے گئے ایک خود کش حملے میں کم سے کم 30 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

حکام کے مطابق یہ حملہ شہر کے شمالی ضلعے کے ایک مصروف بازار کے ایک خمیے میں ہوا جس میں 60 سے زائد افراد زخمی بھی ہوئے۔

عراق میں شیعہ زائرین حضرت امام حسین کی برسی کی تقریبات میں حصہ لے رہے ہیں۔

تاحال کسی نے اس حملے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے تاہم ماضی میں ایسے حملے نام نہاد دولتِ اسلامیہ کی جانب سے کیے جاتے رہے ہیں۔

اطلاعات ہیں کہ حملہ آور نے دن کے کھانے کے اوقات میں دھماکہ کیا جس وقت یہاں زائرین کی بڑی تعداد موجود ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption حملہ میں 60 سے زائد افراد زخمی ہوئے

مشرق وسطی میں بی بی سی کے ایڈیٹر سبیسچیئن اوشیر کا کہنا ہے کہ سنی جنگجو اکثر حملوں کے لیے ایسے زائرین کو ہدف بناتے رہتے ہیں جن میں بڑی پیمانے پر ہلاکتیں ہوئی ہیں۔

رواں برس دولتِ اسلامیہ نے بغداد میں کئی حملے کیے جن میں سینکڑوں افراد ہلاک ہوچکے ہیں اور یہ عراق میں ان کے خلاف حکومتی کارروائی کے بعد ایک بڑا علاقہ ان کے ہاتھوں سے نکل جانے کا ردِ عمل قرار دیا جا رہا ہے۔

اسی بارے میں