اقوامِ متحدہ کا شامی سکول پر حملے کی فوری تحقیقات کا مطالبہ

شام تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption سکول پر حملے میں ہلاک شدگان کی تعداد 35 تک پہنچ گئی ہے

اقوامِ متحدہ کے جنرل سیکریٹری بان کی مون نے بدھ کے روز شام میں ایک سکول پر ہونے والے فضائی حملے کی فوری تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔ اطلاعات کے مطابق اس حملے میں 20 سے زیادہ بچے ہلاک ہو گئے تھے۔

انسانی حقوق کے کارکنوں کا کہنا ہے کہ حملے میں باغیوں کے زیرِ قبضہ قصبے ادلب کے قریب ایک سکول کو نشانہ بنایا گیا تھا۔

یونیسیف کے مطابق 11 اکتوبر کے بعد سے ادلب سمیت پانچ سکولوں کو 'غیرانسانی' حملوں کا ہدف بنایا گیا ہے۔

شام میں طبی عملے اور ایک برطانوی مبصر گروپ نے جمعرات کے روز کہا کہ ادلب کے حملے میں ہلاک شدگان کی تعداد 35 تک پہنچ گئی ہے جن کی اکثریت بچوں پر مشتمل ہے۔

بظاہر الب سے 75 کلومیٹر جنوب مغرب میں حاص نامی گاؤں پر اس وقت بم گرنا شروع ہو گئے جب بچے فضائی حملوں کے پیشِ نظر قبل از وقت گھروں کو جانے کی تیاری کر رہے تھے۔

بی بی سی اس حملے کی غیرجانبدارانہ تصدیق نہیں کر سکی۔

روس نے تردید کی ہے کہ یہ حملہ اس نے یا پھر اس کے شامی اتحادیوں نے کیا ہے۔

روسی وزارتِ دفاع کے ترجمان میجر جنرل ایگور کونس شینکوف نے کہا کہ سکول پر حملے کا دعویٰ من گھڑت ہے اور ایک روسی ڈرون سے جمعرات کو لی جانے والی تصاویر میں دیکھا جا سکتا ہے کہ سکول کی چھت اب بھی سلامت ہے۔

تاہم برطانوی میں قائم سیریئن آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس کے مطابق 'روسی یا شامی جنگی جہازوں' نے اس گاؤں پر چھ حملے کیے۔

تصویر کے کاپی رائٹ MUAZ AL-SHAMI, SYRIAN REVOLUTION NETWORK, VIA AP
Image caption انسانی حقوق کے کارکنوں کا کہنا ہے کہ اس حملے میں ہلاک اور زخمی ہونے والوں کی بڑی تعداد بچوں پر مشتمل ہے

کارکنوں نے ایک عارضی ہسپتال کے فرش پر پڑی ہوئی لاشوں کی تصاویر شیئر کی ہیں جن کی اکثریت بچوں پر مشتمل ہے۔

بان کی مون نے کہا: 'اگر عالمی غم و غصے کے باوجود ایسے حملے جاری ہیں تو اس کی وجہ یہ ہے کہ حملہ آوروں کو، چاہے وہ اقتدار کے ایوانوں میں موجود ہوں یا باغیوں کے ٹھکانوں میں، انصاف کا کوئی خوف نہیں ہے۔ انھیں لازماً غلط ثابت کرنا ہو گا۔'

یونیسیف کے سربراہ نے کہا کہ اگر حملہ جان بوجھ کر کیا گیا ہے تو یہ جنگی جرم ہے۔

انھوں نے کہا: 'یہ حالیہ بربریت پانچ سال قبل جنگ شروع ہونے کے بعد سے سب سے مہلک حملہ ہو سکتا ہے۔

'خاندانوں سے بچے ہمیشہ کے لیے بچھڑ گئے ہیں، استادوں نے اپنے شاگرد ہمیشہ کے لیے کھو دیے ہیں۔ شام کے مستقبل پر ایک اور داغ۔ اس بربریت پر دنیا کا احساسِ تنفر کب اس اصرار کے مساوی ہو گا کہ ایسے حملے ہر صورت ختم ہونے چاہییں؟'

اسی بارے میں