برطانوی پارلیمان کے کچھ اراکین بریگزٹ پر عملدرآمد کے خلاف ووٹ دیں گے

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ہائی کورٹ نے کہا ہے کہ ممبر پارلیمان بریگزٹ شروع کرنے پر ووٹ ضرور ڈالیں

لبرل ڈیموکریٹ، لیبر اور ایس ڈی ایل پی کے کئی برطانوی پارلیمان کے ممبران نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ وہ برطانیہ کو یورپی یونین سے باقاعدہ طور پر نکالنے والے قانون آرٹیکل 50 کو لاگو کیے جانے کے خلاف ووٹ دینے کے لیے تیار ہیں۔

لبرل ڈیموکریٹ لیڈر ٹِم فیرن نے کہا ہے کہ ان کی جماعت اس وقت تک اس کی مخالفت کرے گی جب تک برطانیہ کے یورپی یونین کے رہنماؤں کے ساتھ بریگزٹ پر معاہدے پر دوسرا ریفرنڈم نہیں ہوتا۔

لیبر پارٹی کے یہ کہنے کے باوجود کے وہ اس کی مخالفت نہیں کرے گی اس کے کئی ممبر پارلیمان بھی اس کے خلاف ووٹ دینے کے لیے تیار ہیں۔

حکومت کا کہنا ہے کہ لبرل ڈیموکریٹ اور لیبر کے ممبر پارلیمان 'ریفرنڈم کے نتائج کو روکنے اور واپس موڑنے کی کوشش کر رہے ہیں۔'

کنزرویٹو ممبر پارلیمان کی حمایت اور متعدد لیبر پارلیمان کے غیر حاضر رہنے کی وجہ سے یہ امکان پیدا ہو گیا ہے کہ یہ مسودہ قانون دارالعوام سے پاس ہو جائے۔

لیکن کچھ ممبر پارلیمان کی مخالفت سے ممکن ہے کہ دارالامرا میں اس پر تنقید کرنے والوں کو شے ملے۔

تصویر کے کاپی رائٹ PA
Image caption ٹِم فیرن نے کہا ہے کہ ان کی جماعت دوسرے ریفرنڈم تک اس کی مخالفت کرے گی

لبرل ڈیموکریٹس کافی عرصے سے حکومت کے یورپی یونین کے ساتھ مذاکرات پر ریفرنڈم کا مطالبہ کرتے رہے ہیں لیکن اب انھوں نے کہا ہے کہ اگر ان کے مطالبات منظور نہ کیے گئے تو وہ لازمی طور پر آرٹیکل 50 کے خلاف ووٹ دیں گے۔

ٹِم فیرن نے، جن کی جماعت کے دارالعوام میں آٹھ ممبر پارلیمان ہیں، بی بی سی کے ریڈیو 4 کے ٹوڈے پروگرام کو بتایا کہ 'آرٹیکل 50 تب ہی آگے بڑھے گا جب معاہدے کی شرائط پر ریفرنڈم ہو گا اور اگر برطانوی عوام کی قدر نے کی گئی تو ہاں، ایک سرخ لکیر ہے، اور ہم حکومت کے خلاف ووٹ ڈالیں گے۔'

لیبر کی شیڈو منسٹر کیتھرین ویسٹ، لیبر کی قیادت کے سابق امیدوار اون سمتھ اور جنوبی لندن سے تعلق رکھنے والی ممبر پارلیمان ہیلن ہیز نے واضح طور پر کہا ہے کہ وہ آرٹیکل 50 کے خلاف ووٹ ڈالنے کے لیے تیار ہیں۔

ایس این پی کے 54 ممبر پارلیمان بھی ان میں شامل ہو سکتے ہیں۔ فرسٹ منسٹر نکولا سٹروجن نے کہا ہے کہ وہ کسی ایسی چیز کے لیے ووٹ نہیں ڈالیں گے جو سکاٹ لینڈ کے عوام کو ترجیح نہ دی جائے۔ انھوں نے پہلے کہا تھا کہ وہ بریگزیٹ کے لیے یورپی یونین کی دفعات کو برطانوی قانون بنانے کے خلاف ووٹ دیں گی۔

اسی بارے میں