ٹوکیو میں 54 سال بعد نومبر میں برف باری

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption اس سال ٹوکیو میں نومبر ہی میں جاڑوں کے موسم کا آغاز ہو گیا

ٹوکیو میں 54 برس بعد پہلی بار نومبر کے مہینے میں برفباری ہوئی ہے۔

جاپانی دارالحکومت کے باسی اس پر حیرت زدہ رہ گئے ہیں کیوں کہ عام طور پر سال کے اس حصے میں درجۂ حرارت دس سے 17 درجے تک رہتا ہے۔

غیر متوقع برف کی وجہ سے عوامی ٹرانسپورٹ کا نظام معمولی تاخیر کا شکار ہو گیا۔

جاپان کے موسمیاتی ادارے نے خبردار کیا ہے کہ سڑکیں برف کی وجہ سے خطرناک ہو سکتی ہیں، اور بجلی کی تاریں گر سکتی ہیں۔

اس سے قبل ٹوکیو میں 1962 میں آخری بار نومبر میں برف باری ہوئی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption ایک سیاح خاتون ٹوکیو کے قریب تسوروگاوکا خانقاہ میں تصویر لے رہی ہیں
تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption اس سال ٹوکیو میں پت جھڑ کے رنگ اور برف ایک ساتھ نمودار ہوئے
تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ... برف سے ایک طرف تو لوگ محظوظ ہوئے تو دوسری طرف مسافروں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑا
تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption مسافر صبح کے وقت گرتی ہوئی برف میں اپنے کام کاج پر جاتے ہوئے
تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption شاہی محل کے مضافات گیلی برف کی چادر سے ڈھک گئے
تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption موسم کی اچانک تبدیلی سے سینو جی کی خانقاہ میں سیاحوں کے لیے یادگار تصویریں لینے کا موقع فراہم ہو گیا
تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ... برف سے خاص طور پر ان لوگوں کو مشکل پیش آئی جنھوں نے اس موسم میں بھی روایتی لباس پہن رکھے تھے