حلب میں 16 ہزار شہری بے گھر ہو گئے ہیں: اقوامِ متحدہ

حلب تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اقوامِ متحدہ کے انسانی حقوق کے سربراہ کے مطابق حلب کے شمالی علاقے سے کم سے کم 16,000 افراد اپنے گھروں سے بھاگ گئے ہیں

اقوامِ متحدہ کا کہنا ہے کہ شامی افواج کی مشرقی شہر حلب میں باغیوں کے زیرِ قبضہ علاقوں کی جانب پیش قدمی کے باعث کم سے کم 16 ہزار شہری بے گھر ہو گئے ہیں۔

اقوامِ متحدہ کے انسانی حقوق کے سربراہ سٹیفن او برائن کا کہنا ہے کہ حلب میں جاری لڑائی کے تیز ہونے اور پھیلنے کے خدشے کے باعث ہزاروں افراد کا وہاں سے بھاگنے کا امکان ہے۔

حلب کا بڑا حصہ بشار الاسد کی حامی فوج کے قبضے میں

شامی فوج کا حلب میں باغیوں کے زیرِ قصبہ علاقے کے ایک تہائی حصے پر کنٹرول

’حلب میں ہسپتالوں پر بمباری سے طبی سہولیات ختم‘

انھوں نے حلب سے بھاگنے والے افراد کی قسمت پر تشویش ظاہر کرتے ہوئے وہاں کی صورتِ حال کو انتہائی ابتر قرار دیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption شامی فوج اور اس کے اتحادیوں نے اس سال ستمبر میں حلب شہر کا قبضہ حاصل کرنے کے لیے ایک بڑی کارروائی کا آغاز کیا تھا

واضح رہے کہ شامی فوج اور اس کے اتحادیوں نے اس سال ستمبر میں حلب شہر کا قبضہ حاصل کرنے کے لیے ایک بڑی کارروائی کا آغاز کیا تھا۔

گذشتہ اختتامِ ہفتے سے لے کر اب تک شامی افواج اور ملیشیا نے ملک کے مشرقی شہر حلب میں باغیوں کے زیرِ قصبہ علاقے کے ایک تہائی حصے کو بازیاب کرا لیا ہے۔

برطانیہ میں قائم انسانی حقوق کی تنظیم سیرئین آبزرویٹری کا کہنا ہے کہ سرکاری فوج کی الصاخور ضلع میں فضائی بمباری سےکم سے کم 18 افراد ہلاک ہو گئے۔

سیرئین آبزرویٹری کے مطابق منگل کی صبع ہونے والی بمباری میں مزید دس افراد مارے گئے۔

شام کی حزب مخالف کے ایک نیٹ ورک گروپ کا کہنا ہے کہ بے گھر ہونے والے افراد کو نشانہ بنایا گیا۔ گروپ نے ان ہلاکتوں کی تعداد 25 بتائی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption سٹیفن او برائن نےحلب سے بھاگنے والے افراد کی قسمت پر تشویش ظاہر کرتے ہوئے 'وہاں کی صورتِ حال کو انتہائی ابتر قرار دیا‘

حلب میں کام کرنے والے ایک طبی کارکن ابو العباس نے پیر کو خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایا 'حلب میں صورتِ حال بہت خراب ہے اور وہاں اجتمائی ہلاکتوں کا خطرہ ہے۔

دوسری جانب اقوامِ متحدہ کے انسانی حقوق کے سربراہ سٹیفن او برائن نےحلب سے بھاگنے والے افراد کی قسمت پر تشویش ظاہر کرتے ہوئے 'وہاں کی صورتِ حال کو انتہائی ابتر قرار دیا۔'

ان کا مزید کہنا تھا 'حلب کے مشرقی علاقے میں گذشتہ چند دنوں کے دوران شدید زمینی لڑائی اور اندھا دھند فضائی بمباری سے اطلاعات کے مطابق سینکڑوں افراد ہلاک اور زخمی ہو چکے ہیں۔'

ان کے مطابق 'حلب میں فضائی بمباری کی وجہ سے کوئی بھی قابلِ استعمال ہسپتال نہیں بچا ہے اور سرکاری خوراک کا ذخیرہ عملی طور پر ختم ہو چکا ہے۔'

اس کے ساتھ ساتھ سٹیفن او برائن نے مزید بتایا کہ باغیوں کی جانب سے حکومت کے زیرِ قبضہ شہری علاقوں میں اندھا دھند شیلنگ کی وجہ سے مشرقی حلب میں چند ہفتوں کے دوران 20 ہزار سے زائد شام شہری لاپتہ ہو گئے ہیں۔

اقوامِ متحدہ کے انسانی حقوق کے سربراہ کے مطابق حلب کے شمالی علاقے سے کم سے کم 16,000 افراد اپنے گھروں سے بھاگ گئے ہیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں