بیٹے کو کار میں قتل کرنے والے والد کو عمر قید

تصویر کے کاپی رائٹ facebook
Image caption جسٹن نے عدالت میں موقف اختیار کیا تھا کہ وہ غلطی سے اپنے بیٹے کو کار میں بھول گئے تھے

امریکہ میں ایک والد کو اپنے بیٹے کو انتہائی گرم موسم میں کار میں بند کر کے قتل کرنے جرم میں عمر قید کی سزا سنائی گئی ہے۔

36 سالہ جسٹن راس ہیرس کے بیٹے کی جون سنہ 2014 میں ایک کار پارک میں کھڑی کار میں موت واقع ہوگئی تھی۔

جسٹن نے عدالت میں موقف اختیار کیا تھا کہ وہ غلطی سے اپنے بیٹے کو کار میں بھول گئے تھے اور ان کا خیال تھا کہ وہ اسے نرسری میں چھوڑ آئے ہیں۔

لیکن ان کے مقدمے میں یہ بات سامنے آئی کہ جب ان کا بیٹا کار میں گرمی سے مر رہا تھا تو وہ اپنے فون سے کم عمر لڑکیوں کو فحش پیغامات بھیج رہے تھے۔

جسٹن کو سزا سناتے ہوئے جج کا کہنا تھا کہ ’یہ ایک ہولناک جرم تھا۔‘ جج کا مزید کہنا تھا کہ ملزم نے سنگدلی کا مظاہرہ کرتے ہوئے گرمی میں اپنے بیٹے کو مرنے کے لیے کار میں چھوڑ دیا۔

اس موقعے پر عدالت میں موجود مجرم نے کسی قسم کا ردِعمل نہیں ظاہر کیا۔

خیال رہے کہ جسٹن کو گزشتہ ماہ نومبر میں اپنے بیٹے کے قتل اور کم عمر لڑکی کو فحش پیغامات بھیجنے کا مجرم قرار دیا گیا تھا۔

استغاثہ کا موقف تھا کہ ملزم اپنے خاندان کو چھوڑ کر دیگر خواتین سے معاشقے چلانا چاہتا تھا اور اسی لیے اس نے اپنے بیٹے کو مارنے کا منصوبہ بنایا۔

دوسری جانب مجرم کے وکیل نے عدالت کو بتایا تھا کہ جسٹن اپنے بیٹے سے بہت محبت کرتے تھے، وہ اس کی موت کے تو ذمہ دار ہیں لیکن یہ ایک غلطی کا نتیجہ تھا۔