حلب میں ’شامی فوج نے کارروائی معطل کر دی‘

حلب تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption روسی وزیر خارجہ سرگئی لاروف کا کہنا ہے مشرقی حصے سے مزید 8000 افراد کا انخلا ہوا ہے

روس کے وزیر خارجہ سرگئی لاروف کا کہنا ہے کہ شام کے شہر حلب کے مشرقی حصے میں شامی افواج نے فوجی کارروائی معطل کر دی ہے۔

اس اقدام کا مقصد جنگ زدہ علاقے میں پھنسے شہریوں کا انخلا ہے۔ سرگئی لاروف کا کہنا ہے مزید 8000 افراد کا انخلا ہوا ہے۔

حلب شہر جہاں چھت کھیتوں میں بدل گئے

مشرقی حلب کے پچاس فیصد علاقے پر حکومتی قبضہ

حلب شہر میں پھنسی لڑکی

حکومت نواز فوجوں نے حالیہ ہفتوں میں مشرقی حلب کے 75 فیصد حصے پر دوبارہ قبضہ حاصل کر لیا ہے جو گذشتہ چار سال سے حکومت مخالف باغیوں کے زیرانتظام تھا۔

ادھر وائٹ ہاؤس کے ترجمان جوش ارنسٹ کا کہنا ہے کہ 'صورتحال کے حوالے سے ہمارا طریقہ کار یہ ہے کہ روسی جو کہتے ہیں انھیں احتیاط سے سنیں لیکن ان کے عملی اقدامات پر نظر رکھیں۔'

سرگئی لاروف کا جرمنی میں یورپی وزرا خارجہ کی ملاقات کے موقع پر کہنا تھا کہ 'میں آپ کو بتا سکتا ہوں کہ آج شامی افواج کی جانب سے مشرقی حلب میں فوجی آپریشنز روک دیے گئے ہیں کیونکہ ایک بڑی تعداد میں شہریوں کا انخلا ہو رہا ہے۔'

ان کا مزید کہنا تھا کہ سنیچر کو روسی اور امریکی عسکری ماہرین جنیوا میں ملاقات کر رہے ہیں تاکہ حلب میں تشدد کے خاتمے کی کوئی راہ نکالی جا سکے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption حکومت نواز فوجوں نے حالیہ ہفتوں میں مشرقی حلب کے 75 فیصد حصے پر دوبارہ قبضہ حاصل کر لیا ہے

امریکہ محکمہ خارجہ کی ایک ترجمان نے تصدیق کی ہے کہ سرگئی لاروف نے جان کیری سے بات چیت کی ہے اور دونوں جنگ بندی پر اتفاق کیا ہے تاکہ امداد کی فراہمی اور شہریوں کا انخلا ممکن ہو سکے۔ ترجمان کے مطابق سنیچر کو ہونے والی ملاقات کی 'مخصوص نوعیت' کے بارے میں 'غور کیا جارہا ہے۔'

اس سے قبل حلب میں مقامی کونسل کے رہنما نے خبردار کیا تھا کہ شہر میں 'ڈیڑھ لاکھ افراد کو موت کی طرف دھکیل دیا گیا ہے۔'

جنیوا میں اقوام متحدہ کے حکام کے ساتھ ملاقات میں بریتا حاجی حسن نے کہا کہ حلب میں گذشتہ چار ہفتوں میں 800 افراد ہلاک اور 3500 زخمی ہوئے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ 'ہم شہریوں کے انخلا کے لیے محفوظ راستہ اور قتل، بمباری اور خون خرابے کے خاتمے کا مطالبہ کرتے ہیں۔'

واضح رہے کہ شامی فوج اور اس کے اتحادیوں نے اس سال ستمبر میں حلب شہر کا قبضہ حاصل کرنے کے لیے ایک بڑی کارروائی کا آغاز کیا تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں