’قطر میں غیر ملکی مزدوروں کے لیے کفالہ کی جگہ نیا قانون‘

عیسیٰ بن سعد ال جفالی ال نعیمی تصویر کے کاپی رائٹ AFP

قطر کے وزیر برائے محنت اور سماجی بہبود عیسیٰ بن سعد ال جفالی ال نعیمی کا کہنا ہے کہ ملک میں غیر ملکیوں کے داخلے اور اخراج کے حوالے سے نیا قانون لاگو کیا جا رہا ہے۔

عیسیٰ بن سعد ال جفالی ال نعیمی کا کہنا ہے کہ 2015 کا قانون 21 منگل سے نئی اصلاحات کے ساتھ فعال کر دیا جائے گا۔

کفالہ کا نظام کیا ہے؟

قطر: ورلڈ کپ کی تعمیرات میں ’جبری مشقت‘

انھوں نے مزید کہا کہ یہ نیا اقدام ایک سال بعد قطری امیر شیخ تمیم بن حماد الثانی کے جانب سے اصلاحات کو قانون کی شکل میں منظور کرنے کے بعد کیا جا رہا ہے۔

قطر کا کہنا ہے کہ ’کفالہ نظام‘ کی جگہ کنٹریکٹ کا قانون لایا جائے گا جس میں ملازمین کے لیے نرمی اور تحفظ کو یقینی بنایا جا سکے گا۔

تاہم انسانی حقوق کی تنظیموں کا کہنا ہے کہ اس تبدیلی کے باوجود یہ نظام ایسے ہی اپنی جگہ برقرار رہے گا۔ انسانی حقوق کی تنظیمیں اس ’کفالہ نظام‘ کو جدید دور کی غلامی قرار دیتے ہیں۔

قطر نے سنہ 2022 کے فٹبال عالمی مقابلوں کے لیے تعمیراتی کاموں کی غرض سے سینکڑوں ہزاروں غیر ملکی مزدور بلوائے ہیں۔

انسانی حقوق کی تنظیموں کا کہنا ہے کہ ان مزدوروں میں سے بہت سے کام کرنے کے لیے سخت اور مشکل حالات کے باعث ہلاک ہو چکے ہیں۔

قطر کا کہنا ہے کہ یہ نیا قانون منگل کے روز سے فعال ہو جائے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption قطر نے 2022 کے فٹبال عالمی مقابلوں کے لیے تعمیراتی کاموں کی غرض سے سینکڑوں ہزاروں غیر ملکی مزدور بلوائے ہیں

حکومت کی جانب سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ’نئی قانونی تبدیلیوں کے تحت نہ صرف قطر نہیں بلکہ اس جیسے دیگر ممالک میں بھی مزدوروں کے حقوق کے احترام کو یقینی بنانے میں مددگار ہوں گی۔‘

ُ

تاہم ایمنیسٹی انٹرنیشنل کا کہنا ہے کہ اس اقدام سے کوئی بڑی تبدیلی نہیں آئے گی۔

تنظیم کے جیمز لنچ نے اس قانون کے حوالے سے کہا کہ ’اس نئے قانون سے شاید ’کفالت‘ کا لفظ ختم ہو جائے لیکن بنیادی نظام اپنی جگہ برقرار رہے گا۔‘

انسانی حقوق کی تنظیموں کے مطابق غیر ملکی مزدوروں کے لیے پھر بھی ملک چھوڑنے کے لیے اپنے مالکان سے اجازت لینا ضروری ہوگی۔

اس سے قبل رواں سال ہی ایمنیسٹی انٹرنیشنل نے قطر پر 2022 کے عالمی کپ کی تیاریوں کے لیے جبری مشقت کا الزام لگایا تھا۔

قطر نے اس حوالے سے کہا تھا کہ اسے ان الزامات پر ’تشویش‘ ہے اور وہ ان کی تحقیقات کر ے گا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں