برازیل: 20 برس تک عوامی منصوبوں پر پابندی کی منظوری

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption منظوری کی خبر آتے ہیں کئی مظاہرین مشتعل ہو گئے

برازیل کی سینیٹ نے آئین میں اس متنازع ترمیم کی منظوری دے دی ہے جس کے تحت آئندہ 20 سال لیے عوامی منصوبوں پر رقوم خرچ نہیں کی جائیں گی۔

کفایت شعاری کے لیے کیے گئے ان اقدامات کی منظوری صدر مائیکل ٹیمر کے لیے نہایت اہم ہے۔

* برازیل کے صدر پر رشوت لینے کا الزام

انہوں نے رواں برس عہدہ سنبھالنے کے بعد وعدہ کیا تھا کہ وہ ملک کو کئی دہائیوں کی بدترین کساد بازاری سے نکالیں گے۔

دارالحکومت اور کم سے کم ایک درجن ریاستوں میں ان اقدامات کے خلاف ہونے والے مظاہرے پر تشدد ہو گئے۔

حزب اختلاف کا کہنا ہے کہ ان اقدامات سے صحت اور تعلیم جیسے شعبے متاثر ہوں گے جن کے لیے پہلے ہی رقوم نہیں ہیں۔

کفایت شعاری کے منصوبے کی منظور کے لیے ہونے والے سینیٹ کے اجلاس کے دوران ہزاروں افراد نے مظاہرہ کیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption برازیل میں آئندہ 20 سال لیے عوامی منصوبوں پر رقوم خرچ نہیں کی جائیں گی

منظوری کی خبر آتے ہیں کئی مظاہرین مشتعل ہو گئے۔ برازیلیا میں مظاہرین نے بس کو آگ لگا دی۔ ساؤ پاؤلو میں ایک سرکاری ادارے پر حملہ کیا گیا۔

حکومت کو اس ترمیم کی منظوری کے لیے 49 ووٹ درکار تھے۔ یہ انتہائی کم فرق سے منظور کی گئی۔

ایک حکومتی اہلکار کا کہنا تھا ’ہم جیت گئے ہیں یہ اہم چیز ہے۔‘

ناقدین کا کہنا ہے کہ غریب لوگ اس سے متاثر ہوں گے اور دو دہائیوں کے لیے پابندی لگا دینا غیر حقیقی قدم ہے۔

یہ اقدامات جمعرات سے نافذالعمل ہوں گے۔

اسی بارے میں