ڈونلڈ ٹرمپ کا اپنے متنازع خیراتی ادارے کو بند کرنے کا عہد

بونڈی اور ٹرمپ تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption فلوریڈا کی اٹارنی جنرل پام بونڈی کو دیے جانے والی رقم کی جانچ کی جا رہی ہے

امریکہ کے نومنتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا ہے کہ وہ اپنے خیراتی ادارے کو بند کرنے کا منصوبہ رکھتے ہیں۔

خیال رہے کہ ان کے خیراتی فاؤنڈیشن کے کام کاج کے بارے میں تحقیقات جاری ہیں۔

نیویارک کے اٹارنی جنرل فاؤنڈیشن میں ہونے والی 'ممکنہ بے ضابطگیوں' کی جانچ کر رہے ہیں جبکہ ٹرمپ کسی بے ضابطگی سے انکار کرتے ہیں۔

اٹارنی جنرل کے دفتر نے کہا ہے کہ جب تک تحقیقات جاری ہیں، ٹرمپ اپنے فاؤنڈیشن کو بند نہیں کر سکتے۔

ٹرمپ نے ہفتے کے روز ایک بیان میں کہا تھا کہ ان کے 'فاؤنڈیشن نے گذشتہ برسوں کے دوران بہت اچھے کام کیے اور اہل تنظیموں کو لاکھوں ڈالر کی امداد دی جس میں معمر افراد، قانون نافذ کرنے والے افسروں اور بچوں کو تعاون بھی شامل ہے۔'

انھوں نے ادارے کو بند کرنے کا جواز پیش کرتے ہوئے کہا: 'میرے صدارتی کردار کے ساتھ اس کے ممکنہ تصادم سے بچنے کے لیے میں نے فیصلہ کیا ہے کہ میں خیراتی کاموں میں اپنی دلچسپی کو دوسرے طریقوں سے جاری رکھ سکتا ہوں۔'

خیال رہے کہ ٹرمپ 20 جنوری کو صدر اوباما کی جگہ لیں گے۔ انھوں نے آٹھ نومبر کو ہونے والے انتخابات میں ڈیموکریٹ امیدوار ہلیری کلنٹن کو شکست دی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption ڈونلڈ ٹرمپ اپنے خیراتی ادارے کی بہت دنوں تک خود ہی کفالت کرتے رہے

ڈونلڈ جے ٹرمپ فاؤنڈیشن ایک نجی خیراتی ادارہ ہے جسے ڈونلڈ ٹرمپ نے سنہ 1987 میں اپنی بیسٹ سیلنگ کتاب 'دا آرٹ آف دا ڈیل' کی کمائی سے قائم کیا تھا۔

انھوں نے سنہ 1989 میں اسے دس لاکھ ڈالر کا تعاون دیا تھا اور سنہ 2005 تک مسٹر ٹرمپ ہی بنیادی طور پر اس میں مالی تعاون کرتے رہے لیکن اس کے بعد وہ ادارہ بینک کے تحت آ گيا اور اس میں ٹرمپ، ان کے دوست اور ایسوسی ایٹس کی جانب سے تعاون ہونے لگا۔

انٹرنل ریوینو سروس کی سنہ 2014 کی تازہ ترین رپورٹ کے مطابق فاؤنڈیشن نے 12 لاکھ ڈالر سے زیادہ کی املاک کا دعویٰ کیا ہے جبکہ اس میں رچرڈ ایبرس کی جانب سے پانچ لاکھ ڈالر سے زیادہ کا تعاون شامل ہے، جبکہ فاؤنڈیشن نے تقریبا چھ لاکھ ڈالر خرچ کیے۔

نیویارک کے اٹارنی جنرل ایرک شنائڈرمین نے ستمبر میں کہا کہ ان کا دفتر اس بات کی 'یقین دہانی چاہتا ہے کہ آیا فاؤنڈیشن نیویارک کے خیراتی قوانین پر عمل کر رہا ہے یا نہیں۔'

انھوں نے اس وقت سی این این کو بتایا: 'ہمیں یہ خدشہ ہے کہ ٹرمپ فاؤنڈیشن اس کے متعلق کسی نہ کسی قسم کی بے ضابطگی میں ملوث ہے۔'

امریکی میڈیا کا کہنا ہے کہ اٹارنی جنرل کا دفتر ٹرمپ فاؤنڈیش کی کم از کم جون سے جانچ پڑتال کر رہا ہے۔ فلوریڈا کی اٹارنی جنرل پام بونڈی کو دیے جانے والی 25 ہزار ڈالر کی رقم کی جانچ کی جا رہی ہے اور مسز بونڈی کسی فراڈ سے انکار کرتی ہیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں