جاپانی وزیراعظم کی پرل ہاربر آمد، ہلاک شدگان کے اہلِ خانہ سے ہمدردی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

جاپان کے وزیراعظم شنز آبے نے امریکی بحری اڈے پرل ہاربر پر 75 برس قبل جاپان کی جانب سے کیے جانے والے حملے میں ہلاک ہونے والے فوجی اہلکاروں کے اہلِ خانہ سے ہمدردی کا اظہار کیا ہے۔

انھوں نے اس موقع پر اپنے خطاب میں کہا کہ ' جاپان کے لوگوں نے اس کا عزم کیا ہے کہ جنگ کے ہولناکی کو دہرانے سے اجتناب کرنا چاہیے۔'

بحری اڈے کے دورے کے موقع پر جاپانی وزیراعظم کے ہمراہ امریکی صدر براک اوباما موجود تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

جنگِ عظیم کے دوران جاپان نے اس اڈے پر حملہ کیا تھا جس کے نتیجے میں 2300 امریکی سپاہی ہلاک ہو گئے تھے۔

مسٹر ابے نے نیول بیس پر حملے کے نتیجے میں ہلاک ہونے والے افراد کو خراج عقیدت پیش کیا۔

انھوں نے اس اقدام پر معافی تو نہیں مانگی تاہم کہا کہ اس کا شکار ہونے والے امریکیوں سے گہرے دکھ کا اظہار کیا۔

جاپانی وزیراعظم شنزو آبے نے اس موقع پر امریکہ کی جانب سے جاپان کے ساتھ تعلقات استوار کرنے کی کوششوں کو بھی سراہا۔

یاد رہے کہ جاپان کی جانب سے امریکی اڈے پر حملے کے بعد اگست 1945 میں امریکہ نے جاپان پر دو ایٹم بم گرا دیے تھے۔

جاپانی وزیراعظم نے دونوں ملکوں کے درمیان اتحاد کو 'امید کا اتحاد' قرار دیا۔

اس موقع پر امریکی صدر نے بھی ہلاک شدگان کو خراج عقیدت پیش کیا اور کہا کہ انھوں نے مسٹر آبے کا خیرمقدم دوستی کے جذبے کے ساتھ کیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

اس دورے سے قبل امریکی صدر براک اوباما نے ہیروشیما کا دورہ کیا تھا۔

وہ امریکہ کے پہلے صدر تھے جنھوں نے جاپان کا دورہ کیا جہاں امریکہ کی جانب سے دوسری جنگِ عظیم میں گرائے جانے والے بم کے نتیجے میں ڈیڑھ لاکھ افرد ہلاک ہو گئے تھے۔

اس سے قبل جاپان کے وزیراعظم شنگرو یوشیدا نے سنہ 1951 میں پرل ہاربر کا دورہ کیا تھا۔

اسی بارے میں