بحرین میں جیل پر حملے میں کئی قیدی رہا

بحرین تصویر کے کاپی رائٹ FRANK GARDNER

بحرین کے حکام کا کہنا ہے کہ مسلح افراد نے دارالحکومت کے قریب ایک جیل پر حملہ کر کے دہشت گردی کے جرم میں سزا پانے والے قیدیوں کو رہا کرا لیا ہے۔

بحرین کی وزارت داخلہ کا کہنا ہے کہ دارالحکومت ماناما کے جنوب میں واقع جو جیل پر مسلح افراد نے حملہ کیا۔ اس حملے میں ایک پولیس اہلکار ہلاک ہوا ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ جیل کے قریبی علاقوں کا محاصرہ کر لیا گیا ہے۔ تاہم حکام نے بیان میں یہ نہیں بتایا کہ جیل سے کتنے قیدیوں کو رہا کرا لیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ فروری 2011 سے بحرین میں مظاہرے جاری ہیں اور مطالبہ کیا جا رہا ہے کہ سنی حکمران شیعہ اکثریت سے امتیازی سلوک بند کرے۔

سنہ 2011 میں مظاہرین نے ماناما کے پرل چوک پر قبضہ کیا تھا اور جمہوریت کا مطالبہ کیا تھا۔

مارچ 2011 میں بحرین نے ہمسایہ خلیجی ممالک سے فوج طلب کی اور سکیورٹی فورسز نے مظاہرین کو چوک سے نکال دیا تھا۔

بحرین میں عوامی مظاہروں کو ختم کرنے کے لیے کارروائیاں کی گئیں جس میں 30 شہری اور پانچ پولیس اہلکار ہلاک ہوئے۔ ان کارروائیوں میں تین ہزار افراد کو حراست میں لیا گیا اور کئی افراد کو فوجی عدالتوں نے سزائیں دیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں