بغداد میں کار بم دھماکہ، 35 افراد ہلاک

بغداد تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption حملے میں بظاہر مزدوروں کو نشانہ بنایا گیا

عراق کے دارالحکومت بغداد کے ایک مصروف چوک میں کار بم دھماکہ ہوا ہے جس سے کم از کم 35 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

شہر کے شیعہ علاقے صدر میں ہونے والے اس دھماکے میں کم از کم 61 افراد زخمی بھی ہوئے ہیں۔

فی الحال کسی نے اس حملے کی ذمہ داری قبول نہیں کی لیکن ماضی میں شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ اس قسم کے حملے کرتی رہی ہے۔

ہفتے کو بغداد ہی میں دو خودکش حملے ہوئے تھے جن میں 28 لوگ مارے گئے تھے اور دولتِ اسلامیہ نے اس کی ذمہ داری قبول کر لی تھی۔

دولتِ اسلامیہ کی نیوز ایجنسی اعماق نے کہا تھا کہ اس حملے کا نشانہ شیعہ تھے، جنھیں وہ منحرف قرار دیتے ہیں۔

پیر کے روز ہونے والے اس حملے کا نشانہ بظاہر وہ مزدور ہیں جو صدر کے علاقے میں کام کا انتظار کر رہے تھے۔

اس حملے میں تین پولیس اہلکار بھی مارے گئے ہیں۔

یہ حملہ ایک ایسے وقت میں ہوا ہے جب فرانسیسی صدر فرانسوا اولاند بغداد کے قریب عراق کی انسدادِ دہشت گردی کی اکیڈمی کا دورہ کر رہے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption فرانسوا اولاند نے عراق میں تعینات فرانسیسی فوجیوں کو بتایا کہ وہ یہاں دولتِ اسلامیہ سے لڑ کر فرانس کو حملوں سے بچا رہے ہیں

انھوں نے وہاں تعینات فرانسیسی فوجیوں کو بتایا کہ وہ یہاں دولتِ اسلامیہ سے لڑ کر فرانس کو حملوں سے بچا رہے ہیں۔

بعد ازاں اولاند کردستان کے علاقے میں جا کر دولتِ اسلامیہ سے برسرِ پیکار فرانسیسی اہلکاروں سے ملاقات کریں گے جو عراقی سرکاری فوجی کی تربیت کر رہے ہیں۔

پیر ہی کو دولتِ اسلامیہ کے جنگجوؤں نے بیجی شہر کے قریب فوجی بیرک پر حملہ کیا، جس میں خبررساں ادارے روئٹرز کے مطابق چار فوجی ہلاک ہو گئے۔

اسی بارے میں