’میری نجی زندگی کے بارے میں خبریں جعلی اور من گھڑت ہیں‘

ڈونلڈ ٹرمپ تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ وہ صدر بنتے ہیں اوباما ہیلتھ کیئر پلان کو ختم کر دیں گے

اامریکہ کے نومنتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا ہے کہ ایسی خبریں کہ روسی خفیہ اداروں کے پاس کچھ ایسا مواد موجود ہے جو ان کے لیے شرمساری کا باعث بن سکتا ہے، بلکل 'جعلی' اور 'فرضی' ہیں اور کچھ 'ذہنی مریضوں' نے انھیں اکھٹا کیا ہے۔

ڈونلڈ ٹرمپ نےبطور نومنتخب صدر اپنی پہلی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے اعلان کیا کہ وہ اپنے دورِ صدارت میں کاروبار سے بلکل علیحدہ رہیں گے اور ان کا تمام کاروبار ان کے دونوں بیٹوں کے حوالے ہوگا۔

ڈونلڈ ٹرمپ اپنی پہلی پریس اس پس منظر میں کر رہے تھے جب امریکی میڈیا میں ایسی خبریں چل رہی تھیں کہ روسی خفیہ اداروں نے مسٹر ٹرمپ کو ذاتی طور پر زیر کرنے والا مواد حاصل کر لیا ہے جس میں ان کے کاروباری معاملات کے علاوہ ان کی عیاشیوں کی ویڈیو بھی شامل ہیں۔

نومنتخب صدر کی پریس کانفرنس کے دوران زیادہ تر سوالات روس کی مبینہ ہیکنگ کے حوالے سے تھے۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ وہ جب بھی بیرون ملک سفر کرتے ہیں وہ نہ صرف خود انتہائی محتاط ہوتے ہیں بلکہ وہ اپنے دوسرے ساتھیوں کو بھی محتاط رہنے کی ہدایت کرتے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ انھیں اچھی طرح معلوم ہے کہ کیسے کیسے کیمرے ایجاد ہو چکے ہیں۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے 'بزفیڈ' جس نے ان کی ذاتی زندگی کے حوالے سے خبر نشر کی ہے کو’گندگی کا ڈھیر‘ قرار دیتے ہوئے کہا کہ ایسی تمام خبریں جعلی اور فرضی اور انھیں افسوس ہے کچھ اداروں نے ایسی افواہوں کو خبروں کی حیثیت دینا مناسب سمجھا۔ ڈونلڈ ٹرمپ نے سی این این کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا لیکن نیویارک ٹائمز کی تعریف کی۔

انھوں نے کہا کہ جوں ہی ان کے نامزد کردہ ہیلتھ سیکرٹری کی تقرری ہو جائے گی وہ اوباما کیئر پلان کو ختم کر کے نیا ہیلتھ بل متعارف کروائیں گے۔ انھوں نے اپنے اس انتخابی نعرے کو پھر سے دہراتے ہوئے کہ وہ میکسیکو کی سرحد کے ساتھ دیوار تعمیر کریں گے جس کی لاگت میکسیکو برداشت کرے گا۔انھوں نے کہا کہ دیوار پر آنے والی لاگت کی وصولی کا طریقہ کچھ بھی ہو سکتا ہے۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے پہلی بار تسلیم کیا کہ روس ہیکنگ کر رہا تھا لیکن صحافیوں کے متعدد سوالات کے باوجود اس کی وضاحت نہیں کی۔

اس سے قبل کریملن نے روسی خفیہ اداروں پر ڈونلڈ ٹرمپ سے متعلق شرمسار کرنے والے مواد حاصل کرنے کے الزامات کی سختی سے تردید کی ہے۔ کریملن کے ترجمان نے اِن الزامات کو من گھڑت اور تعلقات خراب کرنے کی کوشش قرار دیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption روس نے کہا ہے کہ ہیکنگ کے امریکی الزامات 'وِچ ہنٹ' کی یاد دلاتے ہیں

غیر مُصدقہ دعوؤں کے مطابق روس کے پاس نو منتخب صدر کے طوائفوں کے ساتھ تعلقات کے بارے میں معلومات ہیں اور مزید یہ کہ ٹرمپ کی صدارتی مہم کا ماسکو کے ساتھ خفیہ بات چیت کا سلسلہ بھی تھا۔

پچھلے ہفتے امریکی انٹیلی جنس اداروں نے ایک رپورٹ شائع کی تھی جس میں کہا گیا تھا کہ روس نے امریکہ میں صدارتی انتخابات پر اثر انداز ہونے کے لیے ہیکنگ کی مہم چلائی۔

اسی بارے میں