تارکین وطن کا بحران : لیبیا میں کشتی الٹنے سے 100 کے قریب لاپتہ

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption تارکینِ وطن کی کشتی اٹلی اور لیبیا کے درمیان لیبیا کے ساحل سے 50 کلومیٹر دور سمندر میں الٹ گئی

لیبیا کے ساحل کے قریب بحیرہ روم میں تارکینِ وطن کی ایک کشتی الٹنے کے نتیجے میں اس میں سوار 100 کے قریب افراد کے لاپتہ ہونے کا خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے۔

٭اردن کی سرحد پر موجود 85 ہزار شامیوں کے لیے امداد بحال

اطالوی کوسٹ گارڈز جو کہ ڈوبنے والے افراد کی تلاش کے لیے جاری کارروائیوں میں حصہ لے رہے ہیں کا کہنا ہے کہ سمندر میں سے آٹھ لاشوں کو نکالا جا چکا ہے جبکہ چار افراد کو زندہ بچا لیا گیا۔ تاہم اب بھی درجنوں افراد لاپتہ ہیں۔

اطلاعات کے مطابق تارکینِ وطن کی کشتی اٹلی اور لیبیا کے درمیان لیبیا کے ساحل سے 50 کلومیٹر دور سمندر میں الٹ گئی ہے۔

امدادی کارروائیاں میں فرانسیسی بحری جہاز، دو تجارتی بیڑے بھجوانے کے علاوہ فضائی مدد بھی دی جا رہی ہے۔

ابھی یہ واضح نہیں کہ ان تارکینِ وطن کا تعلق کن ممالک سے ہے۔

حالیہ عرصے میں اگرچہ یورپ میں پناہ کی تلاش میں جانے والوں کی تعداد میں کمی تو دیکھنے کو مل رہی ہے تاہم اب بھی سمندر کے پرخطر سفر کے واقعات سامنے آرہے ہیں۔

جمعے کو بحیرہ روم میں سفر کرنے والے 550 تارکین وطن کو اٹلی کے کوسٹ گارڈز نے زندہ بچایا تھا۔

یہ بھی سامنے آیا ہے کہ یورپ میں رواں برس کے پہلے دو ہفتوں میں اب تک ایک ہزار تارکینِ وطن کی آمد ہو چکی ہے۔ حالیہ واقعے سے قبل تک 11 افراد لاپتہ ہو چکے ہیں۔

یو این ایچ سی آر کا کہنا ہے کہ گذشتہ برس پانچ ہزار افراد سمندر کے راستے یورپ جانے کی کوشش میں ہلاک ہوئے تھے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں