اسرائیل: بدو دیہاتیوں اور پولیس میں تصادم، دو افراد ہلاک

اسرائیل تصویر کے کاپی رائٹ AFP

اسرائیل کے جنوب میں پولیس اور بدووں میں غیر قانونی مکانات کو مسمار کرنے کے دوران ہونے والے تصادم کے دوران دو افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

پولیس کا کہنا ہے کہ صحرائے نقب کے علاقے ام الحیران میں ہونے والے ایک کار حملے میں ایک افسر ہلاک ہو گیا جب کہ حملہ آور کار ڈرائیور کو بھی مار دیا گیا ہے۔

اسرائیل میں عرب بدو اور صیہونیت

پولیس کے مطابق حملہ آور کار ڈرائیور اسرائیلی اسلامک موومنٹ کا سرگرم کارکن تھا تاہم مقامی افراد کا کہنا ہے کہ وہ ایک استاد تھا جو حکام سے بات کرنا چاہتا تھا تاکہ مکانات کو مسمار کیے جانے کے عمل کو روکا جا سکے۔

یروشلم میں موجود بی بی سی کے نامہ نگار یولاند نیل کا کہنا ہے کہ علاقے میں کشدیگی میں اضافہ ہو رہا ہے۔

ہمارے نامہ نگار کے مطابق ام الحیران میں متعدد مکانات کو مسمار کیا گیا ہے۔

اسرائیل کی سپریم کورٹ نے اس دلیل کو مسترد کر دیا تھا جس میں کہا گیا تھا کہ مقامی بدو قبیلے کے ارکان کو زمینی حقوق حاصل ہیں۔

سنہ 1950 کی دہائی میں اسرائیلی ریاست کے قیام کے چند برسوں بعد فوج نے بدو قبیلے کو ان کے آبائی گاؤں سے ام الحیران منتقل کر دیا تھا۔انھیں اب نئی رہائشی کالونی میں منتقل ہونے کا کہا گیا ہے۔

اسی بارے میں