برطانوی شہریوں کو اردو اور دوسری زبانیں سیکھنے کا مشورہ

پروفیسر وینڈی آئیرز بینٹ تصویر کے کاپی رائٹ Cambrige TV
Image caption پروفیسر وینڈی آئیرز بینٹ کہتی ہیں کہ سماجی انضمام دوطرفہ عمل ہے

برطانیہ میں واقع کیمرِج یونیورسٹی کی پروفیسر وینڈی آئیرز بینٹ کا کہنا ہے کہ مختلف ثقافت کے لوگوں کے درمیان سماجی انضمام ایک دو طرفہ عمل ہے جس کے لیے یہاں کے مقامی باشندوں کو چاہیے کہ وہ اردو سمیت دیگر تارکینِ وطن کی زبانیں سیکھنے کی کوشش کریں۔

تاہم انھوں نے کہا کہ تارکینِ وطن کو بھی چاہیے کہ وہ انگریزی سکھیں۔

یہ بات انھوں نے سماجی انضمام سے متعلق ڈیم لوئز کیسی اور کل جماعتی پارلیمانی گروپ کی مرتب کردہ دو رپورٹس کی اشاعت کے بعد کہی۔ ان رپورٹوں میں تارکین وطن کے لیے انگریزی میں استعداد بڑھانے پر زور دیا گیا ہے۔

پروفیسر وینڈی آئیرز بینٹ کیمرِج یونیورسٹی میں لِسانیات کی استاد ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ سماجی انضمام کے لیے جہاں تارکین وطن کا انگریزی سیکھنا ضروری ہے وہیں یہاں کے شہریوں کو اردو، پنجابی اور پولِش جیسی زبانوں کی شدبد بھی ہونی چاہیے۔

'میں یہ بات باور کروانا چاہتی ہوں کہ سماجی انضمام ایک دو طرفہ عمل ہے۔'

پروفیسر بینٹ کا کہنا تھا کہ ان علاقوں میں جہاں انگریزی کے ساتھ دوسری زبانوں کے بولنے والی کی بڑی تعداد آباد ہے وہاں ان زبانوں کے سیکھنے سے ایک دوسرے سے قربت کا احساس اور ثقافت کو سمجھنے میں مدد ملے گی۔

'دوسری زبانوں کی بنیادی سمجھ بوجھ بھی مددگار ہو سکتی ہے۔'

پروفیسر بینٹ کا کہنا تھا کہ سماجی روابط اور ہم آہنگی میں مختلف زبانیں سیکھنا مددگار ہوتا ہے۔

اسی بارے میں