میانمار: معروف مسلمان وکیل کو قتل کر دیا گیا

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption بدھمت اکثریت والے ملک میانمار میں کو نی ان چند معروف شخصیات میں سے ایک ہیں جو کہ مسلمان ہیں

میانمار میں ایک معروف وکیل اور آنگ سان سوچی کی سیاسی جماعت این ایل ڈی کے مشیر کو یانگون ایئر پورٹ پر گولی مار کر ہلاک کر دیا گیا ہے۔

کو نی نامی وکیل کو اتوار کے روز اس وقت ہلاک کیا گیا جب وہ بیرونِ ملک سے واپس میانمار پہنچے تھے۔ اس واقعے میں ایک ٹیکسی ڈرائیور بھی ہلاک ہوا ہے۔

حکام نے اس حوالے سے ایک ملزم کو حراست میں لیا ہے تاہم اس حملے کی وجہ نہیں بتائی گئی ہے۔

بدھمت اکثریت والے ملک میانمار میں کو نی ان چند معروف شخصیات میں سے ایک ہیں جو کہ مسلمان ہیں۔

کو نی 1988 کی حکومت مخالف تحریک کا حصہ تھے اور انھوں نے سیاسی وجوہات کی بنا پر جیل بھی کاٹی تھی۔ جیل سے رہا ہونے کے بعد وہ ایک معروف وکیل بنے اور این ایل ڈی کے مشیر کے طور پر بھی کام کیا۔

یانگون میں بی بی سی کے نامہ نگار جونہ فشر کا کہنا ہے کہ کو نی میانمار کے معروف ترین مسلمان وکیل تھے اور ان پر حملہ کرنے والا شخص 53 سالہ کی لِن تھا۔

نامہ نگار نے بتایا کہ کو نی این ایل ڈی کے ان اراکین میں شامل تھے جنھوں نے میانمار میں فوجی حکومت کے بعد حکومتی چارٹر میں ترمیمی بل پر کام کیا تھا۔

کو نی نے گذشتہ سال میانمار مسلم لائرڈ اسوسی ایشن کی بنیاد رکھی اور وہ ملک میں مسلمانوں کے حقوق کے لیے آواز اٹھاتے رہے ہیں۔

اسی بارے میں