’بدنام‘ پیلی گاڑی پر حملہ

تصویر کے کاپی رائٹ SWNS.COM
Image caption گاڑی کے مالک 84 سالہ پیٹر میڈوکس ہیں۔ ان کے مطابق گاڑی پر حملہ رات کو کیا گیا جب وہ گھر کے باہر پارک تھی۔

برطانیہ کے علاقے ببیبری کے ایک انتہائی خوبصورت گاؤں کوٹس ولڈ میں سیاحوں کی تصویریں ’خراب کرنے‘ کے لیے بدنام ایک پیلی گاڑی کو نامعلوم افراد نے نقصان پہنچایا ہے۔

یہ گاڑی سوشل میڈیا پر اس وقت مشہور ہوئی جب برطانیہ کے اس خوبصورت ترین کہلائے جانے والے گاؤں میں ایک سیاح لی میلکم نے ٹوئٹر پر اپنی ایک تصویر شیئر کی اور لکھا کہ ’کسی پوسٹ کارڈ کے نظارے کی طرح حسین گلی کی تصویر، بدنما پیلی گاڑی کی وجہ سے برباد ہوگئی ہے۔‘

اس تصویر میں سترھویں صدی کے کاٹیج کے باہر پیلی گاڑی کو کھڑا دیکھا جاسکتا ہے۔ ان کاٹیجز کی خوبصورتی کی وجہ سے ان کا شمار برطانیہ کی ان عمارتوں میں ہوتا ہے جن کی تصاویر سب سے زیدہ کھینچی گئی ہے۔ میلکم کی ٹویٹ کے بعد اس گاؤں کی سیر کو جانے والے کئی لوگوں نے ٹوئٹر پر ایسی تصویریں پوسٹ کیں اور دعویٰ کیا کہ یہ گاڑی ان کی تصویریں بھی خراب کرچکی ہے۔

گاڑی کے مالک 84 سالہ پیٹر میڈوکس ہیں۔ ان کے مطابق گاڑی رات کے وقت باہر کھڑی تھی جب اس پر حملہ کیا گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ SWNS.COM
Image caption یہ گاڑی اس وقت سوشل میڈیا پر مشہور ہوئی جب برطانیہ کے اس خوبصورت ترین کہلائے جانے والے گاؤں میں ایک سیاح لی میلکم نے ٹوئٹر پر اپنی ایک تصویر شئیرکی اور لکھا کہ کسی پوسٹ کارڈ کے نظارے کی طرح حسین گلی کی تصویر بدنما پیلی گاڑی کی وجہ سے برباد ہوگئی ہے۔

توڑ پھوڑ کرنے والوں نے گاڑی کے بونٹ پر ’موو‘ یعنی ’یہاں سے جاؤ‘ کے الفاظ کندہ کیے ہیں۔

گاڑی پر خراشیں ڈالنے کے علاوہ اس کے شیشوں کو بھی توڑا گیا ہے۔ اندازہ لگایا جارہا ہے کہ پیٹر کو اپنی گاڑی کی مرمت پر چھ ہزار پاونڈ کی رقم خرچ کرنا پڑے گی۔

پیٹر کا کہنا ہے گاڑی کو ٹھیک کراونے میں بہت پیسے خرچ ہوں گے، اس لیے وہ چمکتے ہوئے ہلکے سبز رنگ کی ایک ایسی ہی دوسری گاڑی خریدنے پر غور کر رہے ہیں۔

اسی بارے میں