حکومتی اپیل مسترد، سفری پابندیوں کی معطلی برقرار

مظاہرہ تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption امریکہ بھر میں ٹرمپ کے سات ممالک پر پابندی کے خلاف مظاہرے ہوئے ہیں

امریکی اپیل کورٹ نے ٹرمپ انتظامیہ کی جانب سے سات اسلامی ملکوں کے شہریوں پر عائد سفری پابندیاں بحال کرنے کی اپیل مسترد کر دی ہے۔

اس فیصلے کا مطلب یہ ہے کہ صدر ٹرمپ کا سفری پابندیوں والا انتظامی حکم نامہ اس وقت تک معطل رہے گا جب تک اس مقدمے کا حتمی فیصلہ نہیں آ جاتا۔

عدالت نے وائٹ ہاؤس اور ریاستوں کو پیر تک کا وقت دیا ہے کہ وہ اس بارے میں مزید دلائل پیش کریں۔

٭ ٹرمپ کا پابندی کو بحال کرنے کا عزم، جج پر کڑی تنقید

٭ ’ہر ملک کو اپنے دفاع کا حق ہے‘

ٹرمپ انتظامیہ کی اپیل کا مقصد جمعے کو دیے جانے والے فیصلے کو پلٹنا تھا جسے ریاست واشنگٹن کے ایک وفاقی جج نے صادر کیا تھا۔

ریاستی وکلا کا کہنا تھا کہ ٹرمپ انتظامیہ کا سات اسلامی ملکوں کے شہریوں پر پابندیاں عائد کرنے کا فیصلہ غیر آئینی اور تعصبانہ ہے۔

ریاست واشنگٹن کے شہر سیئٹل کے فیڈرل جج نے حکومتی وکلا کا دعویٰ مسترد کر دیا کہ ریاستوں کے پاس صدر ٹرمپ کے انتظامی حکم نامے کو چیلنج کرنے کا اختیار نہیں ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Empics
Image caption صدر ٹرمپ نے جج کے فیصلے کو مضحکہ خیز بتایا ہے

نیویارک ٹائمز کے مطابق محکمۂ انصاف نے اپنی دلیل میں کہا کسی بیرونی شخص یا گروہ کو ملک میں داخل ہونے سے روکنے کا صدر کے پاس ایسا اختیار ہے جسے نظر ثانی کی ضرورت نہیں اور یہ کہ جمعے کو جج جیمز روبارٹ نے سیئیٹل میں جو فیصلہ سنایا تھا وہ بہت عمومی تھا۔

محکمے نے یہ بھی دلیل پیش کی کہ سیئیٹل کے جج کا فیصلہ بوسٹن کے ایک وفاقی جج کے فیصلے سے بھی متصادم ہے جنھوں نے مسٹر ٹرمپ کے ایگزیکٹیو آرڈر کو برقرار رکھا ہے۔

اس سے قبل ٹرمپ انتظامیہ کے انتظامی حکم نامے میں کہا گیا تھا کہ عراق، شام، ایران، لیبیا، صومالیہ، سوڈان اور یمن سے کوئی بھی شخص 90 دنوں تک امریکہ نہیں آ سکے گا۔ اس فیصلے کے خلاف امریکہ اور امریکہ کے باہر بڑے پیمانے پر مظاہرے ہوئے اور امریکی ہوائی اڈوں پر افراتفری نظر آئی۔

واشنگٹن، میامی اور امریکہ کے دوسرے شہروں کے علاوہ یورپ کے بعض شہروں میں بھی گذشتہ روز سنیچر کو ٹرمپ کے اعلان کے بعد مظاہرے ہوئے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption پابندی کو ختم کیے جانے والے فیصلے کے خلاف صدر ٹرمپ کے حامیوں نے بھی مظاہرہ کیا ہے

لندن میں ہزاروں افراد نے ٹرمپ کے خلاف مظاہرے کیے جبکہ پیرس، برلن، سٹاک ہوم اور بارسلونا میں بھی مظاہرے کیے گئے۔

دوسری جانب صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے حامیوں نے ان مظاہروں کی مخالفت میں مظاہرے کیے۔

صدر ٹرمپ کے حکم کے بعد تقریباً 60 ہزار ویزے منسوخ کر دیے گئے تھے لیکن جج جیمز روبارٹ کے عبوری فیصلے کی رو سے فوری طور پر ملک گیر سطح پر اس حکم نامے کو معطل کر دیا۔

گذشتہ روز صدر ٹرمپ نے جج روبارٹ کے فیصلے کو 'مضحکہ خیز' قرار دیتے ہوئے پابندی کو لاگو کرنے کا عزم کیا تھا۔

خیال رہے کہ سیئٹل کے ایک جج نے جمعے کو سات مسلم اکثریت والے ممالک کے لوگوں کے امریکہ آنے پر پابندی لگانے کے ٹرمپ انتظامیہ کا فیصلہ معطل کر دیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption عدالتی فیصلے کے بعد مشرق وسطی سے لوگ کشاں کشاں امریکہ آ رہے ہیں

اسی حکم کے تحت امریکہ میں پناہ گزینوں کے داخلے کے پروگرام کو 120 دنوں کے لیے معطل کر دیا گیا تھا۔ ساتھ ہی شامی پناہ گزینوں کے امریکہ آنے پر غیر معینہ مدت کے لیے پابندی لگا دی گئی تھی۔

لیکن جج کے فیصلے کے بعد امریکی کسٹمز کے حکام نے امریکی فضائی کمپنیوں سے کہا ہے کہ جب تک معاملہ عدالت میں ہے، وہ پابندی سے متاثرہ ممالک کے شہریوں کو امریکہ لا سکتے ہیں۔

اس فیصلے کے بعد بہت سی فضائی کمپنیوں کا کہنا ہے کہ انھوں نے ان سات ملکوں سے مسافروں کو امریکہ لے جانے کے لیے پروازیں شروع کر دی ہیں۔

تاہم ٹرمپ انتظامیہ اگر اس فیصلے کے خلاف ہنگامی حکمِ امتناعی حاصل کرنے میں کامیاب ہوتی ہے تو یہ سلسلہ پھر رک سکتا ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں