برطانوی پارلیمان میں یورپی یونین چھوڑنے کا بل منظور

پارلیمان
Image caption برطانیہ کی عدالت عظمیٰ نے حکم دیا تھا کہ بریگزٹ پر عمل درآمد شروع کرنے کا فیصلہ پارلیمان میں ووٹنگ کے ذریعے کیا جائے

برطانوی پارلیمان کے ایوان زیریں نے حتمی ووٹ کے ذریعے برطانیہ کے یورپی یونین چھوڑنے کے حوالے مذاکرات کے آغاز کی منظوری دے دی ہے۔

ایوان زیریں میں 122 کے مقابلے 494 ارکان پارلیمان نے وزیراعظم ٹریزا مے کو بریگزٹ مذاکرات شروع کرنے کے حق میں فیصلہ دیا ہے۔

بریگزٹ کا فیصلہ، اب آگے کیا ہو گا؟

’یورپی یونین چھوڑنے کے لیے حکومت مذاکرات شروع کرے‘

’بریگزٹ، کٹر قوم پرستی بڑھ سکتی ہے‘

اب اس بل کو مزید جانچ پڑتال کے لیے ایوان بالا یعنی ہاؤس آف لارڈز میں پیش کیا جائے گا۔

تاہم لیبر پارٹی کے 52 اراکینِ پارلیمنٹ نے اپنی پارٹی کے موقف سے بغاوت کی ہے جس میں لیبر پارٹی رہنما کلائیو لیوئس بھی شامل ہیں۔

کلائیو لیوئس کا پہلے کہنا تھا کہ وہ یورپی یونین بل کے حوالے سے کوئی فیصلہ نہیں کر سکے تاہم انھوں نے حتمی ووٹنگ کا وقت شروع ہونے قبل استعفی دے دیا۔

ان کا کہنا تھا کہ وہ 'کسی ایسی چیز کے ووٹ نہیں کرسکتے جس کے بارے میں وہ سمجھتے ہیں کہ اس سے اس شہر کو نقصان پہنچے گا جس کی نمائندگی میرے لیے اعزاز ہے، جسے میں گھر سمجھتا ہوں۔'

رہنما جیریمی کوربائن کا کہنا تھا کہ وہ کچھ ارکان پارلیمان کے ووٹنگ کے حوالے سے مشکلات کو سمجھتے ہیں تاہم ان کا کہنا ہے کہ انھیں آرٹیکل 50 کی حمایت کرنے کا حکم دیا گیا تھا کیونکہ ان کی جماعت 'بریگزٹ کو بلاک نہیں کرسکتی۔'

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption 122 کے مقابلے 494 ارکان پارلیمان نے وزیراعظم ٹریزا مے کو بریگزٹ مذاکرات شروع کرنے کے حق میں فیصلہ دیا ہے

وزیراعظم ٹریزا مے نے لسبن معاہدے کے آرٹیکل 50 کے ذریعے یورپی یونین کے ساتھ مذاکرات کے آغاز کے لیے 31 مارچ کی حتمی تاریخ مقرر کر رکھی ہے۔

یاد رہے کہ برطانیہ کی عدالت عظمیٰ نے حکم دیا تھا کہ بریگزٹ پر عمل درآمد شروع کرنے کا فیصلہ پارلیمان میں ووٹنگ کے ذریعے کیا جائے۔ اس عدالتی فیصلے کا مطلب یہ تھا وزیراعظم ٹریزا مے ارکان پارلیمان کی منظوری کے بغیر یورپی یونین کے ساتھ بات چیت شروع نہیں کر سکیں گی۔

خیال رہے کہ گذشتہ سال جون میں برطانیہ میں یورپی یونین میں رہنے یا نکل جانے کے سوال پر ہونے والے تاریخی ریفرنڈم کے نتائج کے مطابق 52 فیصد عوام نے یورپی یونین سے علیحدگی ہونے کے حق میں جبکہ 48 فیصد نے یونین کا حصہ رہنے کے حق میں ووٹ دیا تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں