چین کا جبوتی میں امریکی اڈے کے قریب فوجی اڈہ تعمیر کرنے کا فیصلہ

امریکی اڈہ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption جبوتی میں قائم امریکی فوجی آڈے میں چار ہزار اہلکار موجود ہیں

چین افریقی ملک جبوتی میں اس امریکی اڈے کے قریب اپنا پہلا فوجی اڈا قائم کر رہا ہے جسے امریکہ مشرق وسطیٰ اور افریقہ میں اپنی بڑی اور اہم فوجی کارروائیوں کے لیے استعمال کرتا ہے۔

امریکی اخبار نیویارک ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق نائن الیون کےحملے کے بعد امریکہ نے جبوتی میں ایک فوجی اڈہ قائم کیا تھا جہاں چار ہزار امریکی اہلکار تعینات ہیں جو افریقہ اور مشرق وسطیٰ میں کارروائیوں میں مصروف رہے ہیں۔ حال ہی میں امریکہ کی جانب سے یمن میں ہونے والی فوجی کارروائی بھی اسی کیمپ سے ہوئی تھی۔

چین کا فوجی اڈہ جو اس کی سرزمین سے باہر پہلا فوجی اڈہ ہوگا، کیمپ لیمنر نامی امریکی فوجی اڈے سے صرف چند میل ہی دور ہے۔

٭ ڈونلڈ ٹرمپ چین پر برس پڑے، ٹوئٹر کے ذریعے تنقید

٭ ’ون چائنا پالیسی کو چیلنج کیا تو آبنائے تائیوان میں امن متاثر ہو گا‘

چین اور امریکہ میں بحیرۂ چین میں چین کی جانب سے مصنوعی جزیرے تیار کرنے کے حوالے سے کشیدگی پائی جاتی ہے۔ امریکہ بارہا چین کو بحیرۂ چین میں مصنوعی جزیرے قائم کرنے سے باز رہنے کی تنبیہ کر چکا ہے۔

امریکہ کے موجودہ وزیر خارجہ ٹلرسن نے اپنی نامزدگی کے حوالے سے کانگریس میں ہونے والی سماعت کے دوران کہا تھا کہ امریکہ چین کی ان مصنوعی جزیروں تک رسائی کو روک بھی سکتا ہے۔

ایک امریکی فوجی ماہرگیبرئیل نے چین کی جانب سے جبوتی میں فوجی اڈہ تعمیر کرنے پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ ایسا ہی ہے کہ فٹبال کی دو حریف ٹیمیں ساتھ ساتھ گراؤنڈ میں تیاری کر رہی ہوں۔

روڈ آئیلینڈ کے نیول وار کالج کے پروفیسر پیٹر ڈنٹن نے کہا کہ یہ فوجی حکمت عملی کے حوالے انتہائی اہم واقعہ ہے۔

انھوں نے کہا کہ 'تمام توسیع پسندانہ قوتیں ایسا ہی کرتی ہیں جو چین کر رہا ہے۔ چین نے برطانیہ سے سبق سیکھا ہے جو 200 سال سے یہی کچھ کر رہا تھا۔'

البتہ چین کےحکام نےجبوتی میں اپنے فوجی اڈے کے قیام کی اہمیت کو گھٹا کر پیش کیا ہے۔ چین کی وزارت دفاع نے نیویارک ٹائمز کو اپنے تحریری جواب میں کہا کہ اس اڈے کا قیام کوئی بڑی بات نہیں ہے اور اس کو بحری قزاقوں کے خلاف آپریشن میں استمعال کیا جانا مقصود ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption چین جبوتی اور ایتھوپیا کو ملانے کے لیے ایک ریلوے لائن بھی تعمیر کر رہا ہے

چین کی وزارت دفاع نے نیویارک ٹائمز کے سوال کے تحریری جواب میں مزید کہا کہ اقوام متحدہ کے امن مشن میں شریک اور خلیج عدن میں مصروف چینی فوجیوں کو آرام مہیا کرنے کے لیے استعمال کرنے کے لیے بنایا گیا ہے۔

جبوتی کی حکومت کی جانب سے چین کو فوجی اڈے کے لیے زمین دینے کا فیصلہ امریکی اہلکاروں کے لیے غیر متوقع تھا۔ دو سال قبل صدر براک اوباما کی قومی سلامتی کی امور سوزن رائس نے جبوتی کا دورہ کر کے جبوتی کے روس کے ساتھ اسی طرح کے معاہدے کو ناکام بنایا تھا۔

جبوتی کےشہری عبدی رحمان ایم احمد نے کہا کہ انھیں چین کی اپنے ملک میں موجودگی سے کوئی پریشانی نہیں ہے۔ انھوں نے کہا 'کہ وہ نہ صرف ہمیں ٹیکس دیتے ہیں بلکہ ہمیں وہ ان طاقتوں سے بچاؤ کا سبب بنیں گےجو ہمیں اپنے ساتھ ملانا چاہیں گے۔'

اسی بارے میں