چار امریکی ریاستوں کا سفری پابندیوں کے صدارتی حکمنامے کے خلاف مقدمہ

امریکہ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اس حوالے سے تاحال اپنے ردعمل کا اظہار نہیں کیا

امریکی ریاست ہوائی کے بعد مزید تین ریاستوں نے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے سفری پابندی سے متعلق نئے صدارتی حکم نامے کے خلاف مقدمہ دائر کیا ہے۔

ریاست نیویارک کا مقدمے میں کہنا ہے کہ صدارتی حکمنامہ مسلمانوں پر پابندی ہے جبکہ واشنگٹن کے مطابق یہ حکمنامہ ریاست کے لیے نقصان دے ہے۔

دوسری جانب وائٹ ہاؤس کا کہنا ہے کہ' وہ بہت پراعتماد 'ہیں کہ عدالت میں پابندی کی جیت ہو گی۔

ٹرمپ نے سفری پابندیوں کے نئے حکم نامے پر دستخط کر دیے

’سفری پابندیوں کا نیا حکم نامہ بلا جواز ہے‘

ریاست میساچوسٹس بھی قانونی چارہ جوئی میں شامل ہو گئی جبکہ اطلاعات کے بعد ریاست اوریگن اور مینسوٹا بھی صدارتی حکمنامے کو روکنے کے لیے مقدمہ دائر کر رہی ہیں۔

نیویارک کے اٹارنی جنرل ایرک شنائڈرمین کا کہنا ہے کہ 'صدر ٹرمپ کا نیا صدارتی حکمنامہ ایک دوسرے نام سے مسلمانوں پر پابندی ہے، پالیسیوں اور پروٹوکولز کو مسلط کرنا ایک بار پھر امریکی آئین میں مساوی حقوق کی شق کے خلاف ورزی ہے۔'

اس سے پہلے ہوائی کے اٹارنی جنرل کا کہنا ہے کہ نیا حکم نامہ بنیادی طور پر پہلے جیسا ہی ہے اور انھوں نے اس کو ’مسلمانوں پر پابندی‘ کی نئی شکل قرار دیا۔

نئے حکم نامے کے مطابق چھ مسلم اکثریتی ممالک کے شہریوں پر 90 دن کی پابندی جبکہ تمام پناہ گزینوں پر 120 دن کی پابندی لاگو ہوگی۔ اس حکم نامے کا اطلاق 16 مارچ سے ہوگا۔

خیال رہے کہ جنوری میں سفری پابندیوں سے متعلق جاری کیے گئے ایک حکم نامے کے خلاف ملک بھر میں مظاہرے دیکھنے میں آئے تھے اور امریکہ کے ہوائی اڈوں پر شدید افرا تفری کا عالم تھا تاہم اس حکم نامے کو فیڈرل کورٹ نے فروری میں معطل کر دیا تھا۔

ہوائی کے اٹارنی جنرل ڈوگ چن نے نئے حکم نامے کے بارے میں کہا کہ ’اس میں کچھ تبدیل نہیں ہوا: اس میں بھی مسلم اکثریتی ممالک (ایک کو کم کر کے) سے آنے والوں کے داخلے پر وہی پابندی ہے۔‘

بدھ کو دائر کی جانے والی حالیہ درخواست میں نئے صدارتی حکم نامے کو ہنگامی طور پر معطل کرنے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

اس مقدمے کی سماعت نئی سفری پابندی کے اطلاق سے ایک روز قبل 15 مارچ کو کی جائے گی۔

نئے حکم نامے کے مطابق ایران، لیبیا، شام، صومالیہ، سوڈان اور یمن کے شہریوں کی امریکہ داخلے پر 90 روز کے لیے پابندی عائد کی گئی ہے۔ پہلے حکم نامے میں عراق کا بھی نام پابندی لگائے گئے ملکوں کی فہرست میں شامل تھا لیکن نئے حکم نامے میں اس کا نام خارج کر دیا گیا ہے۔

ڈوگ چن کا کہنا تھا کہ حکم نامے میں کی گئی تبدیلیوں کے باوجود اس میں ’پناہ گزینوں کے داخلے پر مکمل پابندی ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption اس مقدمے کی سماعت نئی سفری پابندی کے اطلاق سے ایک روز قبل 15 مارچ کو کی جائے گی

نئے حکم نامے میں تصدیق شدہ پناہ گزین اس پابندی سے مستثنیٰ ہیں جبکہ شامی شہریوں پر عائد غیرمعینہ مدت کی پابندی ختم کی گئی ہے۔

اس کے علاوہ اس پابندی سے امریکہ میں قانونی طور پر رہائش پذیر افراد بھی متاثر نہیں ہوں گے۔ اس کے علاوہ نیا حکم نامہ گذشتہ حکم نامے کے برعکس مذہبی اقلیتوں کو ترجیح نہیں دیتا۔

نئے حکم نامے میں یہ ترامیم گذشتہ صدارتی حکم نامے کو امریکہ کی وفاقی عدالتوں کی جانب سے معطل کیے جانے کے بعد کی گئی ہیں۔

عدلیہ کا کہنا تھا کہ یہ پابندی غیرقانونی اور مسلمانوں کے خلاف ہے تاہم حکومت اس کی تردید کرتی ہے۔

خیال رہے کہ ہوائی کا شمار بھی ان ریاستوں میں ہوتا ہے جنھوں نے پہلے صدارتی حکم نامے کے خلاف عدالت سے رجوع کیا تھا۔

دوسری جانب‌ صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اس حوالے سے تاحال اپنے ردعمل کا اظہار نہیں کیا، تاہم وہ اس سے قبل اس بات پر اصرار کر چکے ہیں کہ وہ ایسا صدارتی حکم نامہ جاری کرنے کا حق رکھتے ہیں اور انھوں نے عدالتوں کو سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے 'سیاسی' اثرورسوخ کی حامل قرار دیا تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں