میانمار کی سکیورٹی فورسزروہنگیا اقلیت کے خلاف انسانیت سوز جرائم میں ملوث: ینگہی لی

ینگہی لی
Image caption ینگہی لی کا کہنا ہے کہ انھیں ان الزامات کی تفتیش کے لیے میانمار کے شورش زدہ علاقے تک آزادانہ رسائی نہیں دی گئی

اقوام متحدہ کی ایک اعلیٰ اہلکار ینگہی لی نے کہا ہے کہ میانمار میں فوج اور پولیس ملک کی روہنگیا مسلمان اقلیت کے خلاف 'انسانیت سوز جرائم' کی مرتکب ہو رہی ہیں۔

بی بی سی کے جونا فشر سے بات کرتے ہوئے میانمار میں حقوقِ انسانی کی صورتحال پر اقوامِ متحدہ کی خصوصی ایلچی نے کہا کہ وہ پیر کو اس سلسلے میں اقوام متحدہ کی انکوائری کمیشن کو تحقیقات کے لیے باضابطہ درخواست بھی دے رہی ہیں۔

روہنگیا مظالم، اقوام متحدہ کی سوچی حکومت پر تنقید

’میانمار روہنگیا مسلمانوں کی نسل کشی کرنا چاہتا ہے‘

میانمار میں ایک سال سے برسرِاقتدار جماعت کی قائد آنگ سان سوچی نے اس حوالے سے بی بی سی کی جانب سے انٹرویو کی درخواست رد کر دی ہے تاہم ان کی جماعت کے ترجمان کا کہنا ہے کہ یہ میانمار کا داخلی معاملہ ہے اور اس حوالے سے الزامات بڑھا چڑھا کر پیش کیے جا رہے ہیں۔

ینگہی لی کا کہنا ہے کہ انھیں ان الزامات کی تفتیش کے لیے میانمار کے شورش زدہ علاقے تک آزادانہ رسائی نہیں دی گئی تاہم بنگلہ دیش میں موجود پناہ گزینوں سے بات کر کے انھیں معلوم ہوا ہے کہ صورتحال ان کی توقعات سے کہیں بدتر ہے۔

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ 'میں کہوں گی انسانیت کے خلاف جرائم سرزد ہوئے ہیں۔ یقیناً میانمار کی فوج، سرحدی محافظوں اور پولیس کی جانب سے انسانیت کے خلاف جرائم کیے گئے ہیں۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption آنگ سان سوچی کی حکومت کا کہنا ہے کہ وہ اس حوالے سے خود تحقیقات کر رہی ہے

ان کہنا تھا کہ میانمار کی سکیورٹی فورسز کی جانب سے ظلم و زیادتی 'نظام کا حصہ' ہے اور آنگ سان سوچی کی حکومت کو اس کی کچھ ذمہ داری تو لینا ہوگی۔

'آخرِکار ان کی حکومت ہے، ایک عوامی حکومت جسے اپنی عوام پر تشدد کے خوفناک واقعات اور انسانیت سوز جرائم پر جواب دینا ہوگا۔'

یاد رہے کہ گذشتہ سال دسمبر میں بھی اقوام متحدہ نے روہنگیا اقلیت کے ساتھ روا رکھے جانے والے سلوک کی بنا پر آنگ سان سوچی کی قیادت میں قائم میانمار حکومت کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔

انسانی حقوق کے بارے میں اقوامِ متحدہ کے ادارے کا کہنا تھا کہ اسے ہر روز ریپ، قتل اور دیگر زیادتیوں کے بارے میں رپورٹیں موصول ہو رہی ہیں لیکن آزاد مبصرین کو ان جرائم کی تحقیقات سے روکا جا رہا ہے۔

خیال رہے کہ میانمار میں روہنگیا مسلمانوں کی زیادہ تر آبادی ریاست رخائن میں مقیم ہے اور فوج کا کہنا ہے کہ انھوں نے اس ریاست میں انسدادِ دہشت گردی کی مہم شروع کی تھی تاہم اس کارروائی کے آغاز سے اب تک 75 ہزار افراد ملک چھوڑ کر بنگلہ دیش میں پناہ لے چکے ہیں۔

Image caption میانمار میں روہنگیا مسلمانوں کی زیادہ تر آبادی ریاست رخائن میں مقیم ہے

بنگلہ دیش میں کیمپوں میں مقیم ان روہنگیا باشندوں نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے برمی سکیورٹی فورسز پر شہریوں کو گولیاں مارنے، اغوا کرنے اور نوجوان لڑکیوں کو ریپ کرنے کے الزامات لگائے۔

ان پناہ گزینوں کی بہت سی کہانیوں کی تصدیق سیٹیلائٹ اور ویڈیو ثبوتوں سے کی گئی ہے۔

آنگ سان سو چی نے 15 سال کی نظربندی کاٹنے کے بعد 2015 میں عام انتخابات میں کامیابی حاصل کی تھی۔ میانمار کے قانون کے تحت وہ ملک کی صدر نہیں بن سکیں تاہم انھیں ملک کا 'ڈی فیکٹو' حکمران سمجھا جاتا ہے۔

ان کی جماعت کے ترجمان ون ٹین نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ موجودہ حالات میں آنگ سان سو چی کے پاس فوج کو روکنے کی طاقت نہیں۔

اقوامِ متحدہ کی خصوصی ایلچی کی جانب سے انسانیت کے خلاف جرائم کے الزام پر ان کاکہنا تھا کہ سینکڑوں روہنگیاؤں کی ہلاکت کی خبریں 'بڑھا چڑھا کر' پیش کی گئی ہیں اور بعض اوقات 'اقوامِ متحدہ بھی غلط ہوتی ہے۔'

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں