200 سے زیادہ تارکین وطن کا بحیرہ روم میں ڈوبنے کا خطرہ

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

سپین کے ایک ادارے نے اس خدشے کا اظہار کیا ہے کہ تارکین وطن کی کشتی لیبیا کے ساحل پر ڈوب گئی ہے اور اس میں سوارت 200 افراد اپنی جانیں گنوا بیٹھے ہیں۔

پروایٹیوا اوپن آرمز نامی ادارے کی اہلکار لانوزا کے مطابق اب تک انھوں نے دو ڈوبنے والی کشتیںوں میں سوار200 میں سے پانچ لاشوں کو نکال لیا ہے۔

ادارے کا کہنا ہے کہ جن پانچ لاشوں سمندر سے کو نکالا گیا ہے وہ نوجان لڑکوں کی ہیں اور بظاہر ایسا لگتا ہے کہ وہ ڈوب کر ہلاک ہو گئے تھے۔

اٹلی کے ساحلی محافظوں نے بھی پانچ ہلاکتوں کی تصدیق کی ہے۔

تاہم بی بی سی کو بتایا گیا ہے کہ وہ پروایٹیوا کی جانب سے دیے جانے والے اعدادوشمار کی تصدیق نہیں کر سکتے کیونکہ انھیں کسی بھی کشتی کی جانب سے مدد کے لیے کال موصول نہیں ہوئی۔

لانوزا کا کہنا ہے کہ کم ازکم 240 تارکینِ وطن ہلاک ہوئے ہیں اور ان کشتیوں میں بہت سی تعداد سمگلروں کی ہوتی ہے۔

اپنے فیس بک پیج پر اس گروپ نے لکھا ہے کہ ' ہم نے پانچ لاشوں کو بازیاب کیا ہے مگر زندہ کوئی بھی نہیں ملا

اسی بارے میں