اقوام متحدہ روہنگیا مسلمانوں کے قتل اور جنسی استحصال کی تفتیش کرے گی

برما تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ہزاروں کی تعداد میں روہنگیا مسلمان ملک چھوڑ کے بنگلہ دیش بھاگ چکے ہیں

اقوام متحدہ کی کونسل برائے انسانی حقوق میانمار کے روہنگیا مسلمانوں کے خلاف ملک کی فوج کی جانب سے مبینہ طور پر کیے جانے والے مظالم کی تفتیش کرے گی۔

یورپی یونین کی جانب سے پیش کی جانے والی قرار داد کو اقوام متحدہ میں متفقہ طور پر منظور کر لیا گیا تھا جس کے مطابق ’حقائق تلاش کرنے کے لیے ایک آزاد مشن بھیجا جائے جس کے تحت ظلم ڈھانے والوں کا بھرپور احتساب ہوگا اور ان مظالم کا شکار بننے والوں کے ساتھ مکمل انصاف کیا جائے گا۔‘

’روہنگیا مسلمانوں کی نسل کشی کا کوئی ثبوت نہیں ملا‘

’میانمار کی فوج اور پولیس انسانیت کے خلاف جرائم میں ملوث‘

میانمار حکومت کے ایک اہلکار کے مطابق انھیں یہ فیصلہ قطعی ’نامنظور‘ ہے کیونکہ میانمار کی حکومت خود اس معاملے کی تفتیش کر رہی ہے۔

انڈیا اور چین نے اقوام متحدہ کے اس فیصلے کی حمایت نہیں کی ہے۔ دونوں ملکوں نے کہا ہے کہ وہ اس تفتیش سے خود کو الگ کر لیں گے۔

گذشتہ چھ ماہ میں 70000 روہنگیا مسلمان اب تک ملک چھوڑ کر بنگلہ دیش بھاگ چکے ہیں اور اقوام متحدہ نے ان افراد سے جنسی استحصال اور بڑے پیمانے پر قتل و غارت کے واقعات سنے ہیں۔

روہنگیا مسلمانوں کے مطابق میانمار کی سرکاری فوج باغیوں کے خلاف کاروائی کرنے کے بہانے ملک کی رکھائن ریاست میں ان کو نشانہ بنا رہی ہے۔ فوجی کاروائی پچھلے سال اکتوبر میں شروع ہوئی تھی جب بارڈر پولیس کے نو اہلکاروں کو ہلاک کر دیا گیا تھا۔

پچھلے مہینے اقوام متحدہ نے ایک سخت رپورٹ شائع کی تھی جس میں حکومتی مظالم سے بھاگ کر بنگلہ دیش جانے والے 200 روہنگیا مسلمانوں کے انٹرویو کی مدد سے شواہد جمع کیے گئے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption میانمار کی حکومت کے مطابق روہنگیا غیر قانونی تارکین وطن ہیں

اقوام متحدہ کے مطابق انٹرویو دینے والے تقریباً 50 فیصد افراد نے کہا کہ ان کے خاندان کا کوئی نہ کوئی فرد قتل کیا جا چکا ہے۔ انٹرویو دینے والی 101 خواتین میں سے 52 نے کہا کہ فوجیوں نے ان کے ساتھ زیادتی کی ہے۔

رپورٹ کے اختتام میں ایک واقع کا ذکر ہے جس کے مطابق ایک آٹھ ماہ کے بچے اور ایک پانچ سالہ بچے کو چھریوں سے ذبح کیا گیا اور اس کے دوران ان کی ماؤں کے ساتھ زیادتی کی جاتی رہی۔

روہنگیا مسلمانوں کے مطابق وہ عرب تاجروں کی اولاد میں سے ہیں جو صدیوں سے میانمار میں موجود ہیں لیکن حکومت کا کہنا ہے کہ وہ سب بنگلہ دیش سے تعلق رکھنے والے غیر قانونی تارکین وطن ہیں۔

یاد رہے کہ ملک کے مغرب میں واقع ریاست رکھائن میں تقریباً دس لاکھ روہنگیا مسلمان رہائش پزیر ہیں جہاں فرقہ وارانہ فسادات کے نتیجے میں 2012 سے اب تک ایک لاکھ سے زائد افراد گھر بدر ہو چکے ہیں۔

اسی بارے میں