روسی حزب مخالف کے رہنما کو 15 روز قید کی سزا

روس تصویر کے کاپی رائٹ AFP

ماسکو کی عدالت نے روس کے حزب اختلاف کے رہنما الیکسی نوالنی کو اتوار کے روز مظاہروں کے دوران پولیس کا حکم نہ ماننے پر 15 روز قید کی سزا سنائی ہے۔

اس سے قبل الیکسی نوالنی کو 20 ہزار روبیل جرمانہ کیا گیا۔

اتوار کو ماسکو میں سینکڑوں مظاہرین اور حزب اختلاف کے قائد کی گرفتاری پر کریملن نے کہا ہے کہ حزب مخالف نے قانون توڑا اور تشدد پر اکسایا۔

کریملن کے ترجمان نے کہا کہ چند جوان مظاہرین کو اس مظاہرے میں شرکت کے لیے رقم دی گئی تھی۔

’روسی اپوزیشن کے رہنما سزا کے بعد صدارتی الیکشن کے لیے نااہل‘

اس سے قبل امریکہ نے روس میں بدعنوانی کے خلاف مظاہرے میں شرکت کرنے والے سینکڑوں مظاہرین کی گرفتاریوں کو تنقید کا نشانہ بنایا۔

امریکی وزارت خارجہ کے ترجمان مارک ٹونر نے کہا کہ پر امن مظاہرین اور انسانی حقوق کے مبصرین کی گرفتاریاں جمہوری اقدار کی کھلی توہین ہیں۔

ترجمان نے روسی حکومت سے ان کی رہائی کی اپیل کی ہے۔

انھوں نے مزید کہا کہ واشنگٹن کو صدر پوتن کے شدید ناقد الیکسی نوالنی کی گرفتاری کی خبر سن کر بہت دکھ ہوا ہے۔

خیال رہے کہ روس کے دارالحکومت ماسکو میں حزب اختلاف کے رہنما الیکسی نوالنی کو غبن اور بدعنوانی کے خلاف احتجاجی مظاہرے کے دوران گرفتار کر لیا گیا جنھوں نے ماسکو میں بدعنوانی کے خلاف اس مظاہرے کا انعقاد کیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

اتوار کو برسوں میں ہونے والے اس بڑے مظاہرے میں شرکت کرنے والے وزیر اعظم دمتری میدویدیف کے استعفے کا مطالبہ کر رہے تھے۔ وزیر اعظم پر الزام ہے کہ انھوں نے اپنے عہدے کا ناجائز فائدہ اٹھایا ہے۔

الیکسی نوالنی کے علاوہ کم از کم ملک بھر سے 900 مظاہرین کو حراست میں لیا گیا ہے جبکہ ملک میں زیادہ تر مظاہرے غیرقانونی تھے کیونکہ حکام سے ان کی پیشگی اجازت حاصل نہیں کی گئی تھی۔

احتجاجی مظاہروں میں صدر پوتن کے خلاف بھی احتجاجی نعرے لگائے گئے۔ نامہ نگاروں کا کہنا ہے کہ روس میں سال 2011/2012 کے بعد حکومت مخالف سب سے بڑے احتجاجی مظاہرے تھے۔

حزب اختلاف کے رہنما الیکسی نوالنی وسطیٰ ماسکو میں جب احتجاجی مظاہرے میں شرکت کے لیے پہنچے تو انھیں گرفتار کر لیا گیا۔

اس موقع پر مظاہرین نے پولیس وین کو روکنے کی کوشش کی جس میں الیکسی نوالنی کو وہاں سے منتقل کیا جا رہا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption ملک بھر سے 5 سو کے قریب مظاہرین کو گرفتار کیا گیا ہے

الیکسی نوالنی نے اپنی گرفتاری کے بعد ٹویٹ میں اپنے حامی مظاہرین سے کہا کہ وہ اپنا احتجاجی جاری رکھیں۔

الیکسی نوالنی نے وزیراعظم دمتری کے بارے میں رپورٹس شائع کی تھیں جن میں مبینہ طور پر کہا گیا تھا کہ وہ محلات، کشتیوں اور انگوروں کے باغات کے مالک ہیں اور یہ اثاثے ان کی سرکاری تنخوا کے حساب سے بہت زیادہ ہیں۔

وزیراعظم دمتری کے ترجمان نے ان الزامات کو مسترد کرتے ہوئے انھیں پروپیگنڈا پر مبنی حملہ قرار دیا۔

خیال رہے کہ گذشتہ ماہ الیکسی نوالنی کو غبن اور بدعنوانی کا مرتکب پایا گیا اور انھیں پانچ برس کی معطل سزا سنائی گئی تھی۔

اس سزا کے بعد وہ آئندہ برس صدر پوتن کے خلاف صدارتی انتخاب میں حصہ لینے کے اہل بھی نہیں رہے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption روس میں ایک عرصے کے بعد کسی مظاہرے میں اتنی بڑی تعداد میں لوگ سڑکوں پر آئے ہیں

تاہم الیکسی نوالنی نے ان تمام الزامات کو بےبنیاد قرار دیتے ہوئے آئندہ انتخاب میں حصہ لینے کا عزم ظاہر کیا تھا۔ ابھی یہ واضح نہیں ہے کہ قانونی طور پر یہ ممکن بھی ہے یا نہیں۔

انھیں اس الزام میں دوسری بار عدالتی سماعت کے بعد قصوروار ٹھہرایا گیا کیونکہ انسانی حقوق سے متعلق یورپی کورٹ نے پہلی بار سماعت کو غیر منصفانہ

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں