میانمار کے فوجی سربراہ کا روہنگیا کے خلاف آپریشن کا دفاع

من آنگ تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption میانمار کے فوجی سربراہ من آنگ نے سوموار کو 72ویں آرمڈ فورس پریڈ میں شرکت کی

میانمار یعنی برما کے فوجی سربراہ نے رخائن میں فوجی آپریشن کا دفاع کیا ہے جس کے نتیجے میں 75 ہزار سے زیادہ مسلم اقلیت کو ملک چھوڑنے پر مجبور ہونا پڑا ہے۔

فوجی سربراہ من آنگ ہلینگ نے کہا کہ روہنگیا میانمار آنے والے تارکین وطن ہیں اور فوج کا یہ فرض ہے کہ ملک کی سیاسی مذہبی اور نسلی مسائل سے تحفظ فراہم کرے۔

٭ روہنگیا مسلمانوں کا درد

٭ 'ہم روہنگیا ہیں، ہمیں مار ہی دیجیے'

خیال رہے کہ گذشتہ ماہ اقوام متحدہ نے اپنی ایک رپورٹ میں کہا تھا کہ سکیورٹی فورسز نے بڑے پیمانے پر روہنگیا اقلیت کا قتل اور اجتماعی ریپ کیا ہے۔

ہر چند کہ بہت سے روہنگیا ایک عرصے سے برما میں قیام پذیر ہیں تاہم ملک میں بہت سے رہنے والے انھیں بنگلہ دیش سے آنے والے ناپسندیدہ تارکین وطن کے طور پر دیکھتے ہیں۔

بہرحال میانمار کی عالمی سطح پر اس بات کے لیے تنقید کی جاتی ہے کہ اس نے اپنے ملک کے رخائن علاقے میں آباد مسلم اقلیت روہنگیا کے خلاف ناروا سلوک روا رکھا ہے۔

ایک تخمینے کے مطابق ان کی تعداد دس لاکھ سے زیادہ ہے لیکن حکومت انھیں غیرقانونی پناہ گزین کہتی ہے۔

فوجی سربراہ من آنگ نے آرمڈ فورس ڈے کے موقعے پر دارالحکومت میں یکجا مجمعے سے خطاب کرتے ہوئے فوجی آپریشن کا دفاع کیا اور کہا: رخائن میں رہنے والے بنگالی میانمار کے باشندے نہیں بلکہ تارکین وطن ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption روہنگیا مسلمانوں کے مطابق وہ عرب تاجروں کی اولاد میں سے ہیں جو صدیوں سے میانمار میں موجود ہیں

سنہ 2016 کے اکتوبر میں ہونے والے دہشت گرد حملے نے سیاسی رخ اختیار کر لیا ہے۔

اس سے قبل اقوام متحدہ کی کونسل برائے انسانی حقوق نے کہا تھا کہ میانمار کے روہنگیا مسلمانوں کے خلاف ملک کی فوج کی جانب سے مبینہ مظالم کی تفتیش کرے گی۔

اے ایف کے مطابق آنگ سان سو چی کی سربراہی والی حکومت نے اقوام متحدہ کے فیصلے کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت خود اس معاملے کی تفتیش کر رہی ہے۔

روہنگیا مسلمانوں کے مطابق وہ عرب تاجروں کی اولاد میں سے ہیں جو صدیوں سے میانمار میں موجود ہیں لیکن حکومت کا کہنا ہے کہ وہ سب بنگلہ دیش سے تعلق رکھنے والے غیر قانونی تارکین وطن ہیں۔

یاد رہے کہ ملک کے مغرب میں واقع ریاست رکھائن میں تقریباً دس لاکھ روہنگیا مسلمان رہائش پزیر ہیں جہاں فرقہ وارانہ فسادات کے نتیجے میں 2012 سے اب تک ایک لاکھ سے زائد افراد گھر بدر ہو چکے ہیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں