جاپان میں برفانی تودہ گرنے سے آٹھ طلبا کی ہلاکت کا خدشہ

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption خراب موسم کے باعث ریسکیو ہیلی کاپٹر جائے وقوعہ پر نہیں پہنچ پا رہے

جاپان میں ایک سکی ریزورٹ کے برفانی تودے کی زد میں آنے سے خدشہ ہے کہ آٹھ طلبہ دب کر ہلاک ہو گئے ہیں۔

یہ برفانی تودہ پیر کی علی الصبح دارالحکومت ٹوکیو سے 120 کلو میٹر دور مقام ناسو کے قریب گرا۔

جاپان کے خبر رساں ادارے کیوڈو کے مطابق اس حادثے میں 30 افراد زخمی ہوئے جبکہ نکالے جانے والے آٹھ طلبہ میں زندگی کے آثار دکھائی نہیں دیے۔

انٹارکٹیکا میں وسیع و عریض برفانی تودہ ٹوٹنے کے قریب

بتایا گیا ہے کہ حادثے کے وقت مختلف سکولوں کے طلبہ اور اساتذہ سمیت کم سے کم 70 افراد وہاں موجود تھے۔

امدادی کارروائیاں جاری ہیں تاہم خراب موسم کے باعثت مشکلات پیش آ رہی ہیں۔

میڈیا رپورٹوں کے مطابق سکولوں کے بچے کوہ پیمائی کی تقریب میں شرکت کر رہے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption آٹھ طلبہ میں زندگی کے آثار دکھائی نہیں دیے

ناسو کے علاقے میں کئی سکی ریزورٹس ہیں اور اس علاقے میں گذشہ دو روز میں شدید برفباری ہوئی ہے اور برفانی تودے گرنے سے متعلق تنبیہات جاری کی گئی تھیں۔

ٹوکیو میں بی بی سی سی کے نامہ نگار کا کہنا ہےکہ جاپان میں ریسکیو حکام کسی بھی شخص کو مردہ قرار نہیں دیتے بلکہ انھیں ڈاکٹر کی طرف روانہ کیا جاتا ہے۔

خراب موسم کے باعث ریسکیو ہیلی کاپٹر جائے وقوعہ پر نہیں پہنچ پا رہے۔ اتوار کو ہی اس علاقے میں 30 سینٹی میٹر تازہ برف پڑی ہے۔

اب گرم موسم کے باعث مزید برفانی تودے گرنے کا خدشہ ہے۔

اسی بارے میں