سڈنی جانا تھا مگر سڈنی پہنچ گئے

سڈنی تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption آسٹریلیا کا شہر سڈنی جہاں ڈچ طالب علم جانا چاہتے تھے

ہالینڈ‌ کے ایک طالب اس وقت عجیب و غریب صورتحال کا شکار ہوئے جب انھوں نے آسٹریلیا کے شہر سڈنی جانے کا منصوبہ بنایا لیکن کینیڈا کے شہر سڈنی پہنچ گئے۔

میلان شپر نے کینیڈین نشریاتی ادارے سی بی سی کو بتایا کہ انھوں نے اس فلائیٹ کی بکنگ اس لیے کروائی تھی کہ یہ دیگر تمام ٹکٹوں سے بہت سستی تھی۔

میلان شپر نے ساحل سمندر پر جانے کا منصوبہ بنایا تھا لیکن انھوں نے خود کو قدر خنک موسم کا سامنا کرتے پایا، انھوں نے صرف ایک ہلکی کی جیکٹ پہن رکھی تھی۔

فضائی کمپنی کے اہلکاروں نے ان کی ایمسٹرڈیم کی واپسی کی ٹکٹ بک کروانے میں مدد کی۔

18 سالہ طالب علم کا کہنا تھا کہ وہ جانتے تھے کہ کچھ غلط ہوا ہے جب ٹورانٹو کے اوپر سے گزرے اور ان کی کنکٹنگ فلائیٹ ایئر کینیڈا کا ایک چھوٹا سا جہاز تھا۔

انھوں نے سی بی سی کو بتایا: 'جہاز واقعی چھوٹا سا تھا اور مجھے خیال آیا کہ کیا یہ آسٹریلیا تک پہنچ سکے گا؟'

ایسا پہلی بار نہیں کہ کسی مسافر نے یہ غلطی کی ہو۔

سنہ 2002 میں ایک نوجوان برطانوی جوڑا بھی کینیڈا کے شہر سڈنی پہنچا تھا جو آسٹریلیا کے شہر سڈنی کے معروف اوپرا ہاؤس کے مقابلے میں جھینگا کشتیوں کے حوالے سے شہرت رکھتا ہے۔

سنہ 2009 میں اخبار ڈیلی میل نے خبر شائع کی تھی کہ ہالینڈ سے تعلق رکھنے والے دادا اور پوتے نے بھی ایسا ہی کیا تھا جبکہ سنہ 2010 میں اطالوی سیاحوں نے یہی غلطی دہرائی تھی۔

میلان شپر کے سڈنی کے ہوائی اڈے پر پہنچنے کے بعد فضائی کمپنی کے اہلکاروں نے ان کی ٹورانٹو کی ٹکٹ بک کروانے میں مدد کی تاکہ وہ ہالینڈ واپس جاسکیں۔

انھوں نے سی بی سی کو بتاتا کہ ان کے والد جب انھیں ایمسٹرڈیم کے ہوائی اڈے پر لینے کے لیے آئے تو 'ناگوار ہنسی ہنسے۔'

اسی بارے میں