ایف بی آئی نے پینٹاگون پر حملے کی تصاویر دوبارہ جاری کر دیں

پینٹاگون تصویر کے کاپی رائٹ FBI
Image caption ایف بی آئی کی ترجمان کا کہنا ہے کہ یہ تصویر پہلی بار 2011 میں آن لائن جاری کی گئی تھیں

امریکہ میں 11 ستمبر 2001 کو پیٹاگون پر ہونے والے حملے کی تصاویر چھ سال کے بعد ایف بی آئی کی ویب سائٹ پر ایک بار پھر جاری کر دی گئی ہیں۔

یہ تصاویر چھ سال قبل پہلی بار جاری کی گئی تھیں۔

ان 27 تصاویر میں آگ بجھانے والے عملے کو آگ بجھاتے دیکھا جاسکتا ہے جبکہ امدادی ٹیمیں اور تفتیش کار ملبے کی تلاشی لے رہے ہیں۔

’نائن الیون کا ذمہ دار خود امریکہ‘،خالد شیخ کا اوباما کو خط

سعودی عرب کی نائن الیون حملوں کے بل پر سخت تشویش

یاد رہے کہ امریکن ایئرلائنز کی ورجینیا سے لاس اینجلس جانے والے پرواز 77 کو مقامی وقت کے مطابق صبح نو بج کر 37 منٹ پر عمارت پر گرایا گیا تھا۔

امریکی حکام کا کہنا تھا کہ مسافر طیارہ پینٹاگون کی پہلی اور دوسری منزل سے ٹکرایا جس سے 184 افراد ہلاک ہوئے۔

تصاویر پر تازہ تاریخ کی مہر ہونے کے باعث یہ سمجھا جا رہا کہ یہ نئی تصاویر ہیں۔

تاہم ایف بی آئی کی ترجمان جیلین سٹکلز کا کہنا ہے کہ یہ تصویر پہلی بار 2011 میں آن لائن جاری کی گئی تھیں۔

ترجمان کے مطابق ایک تکنیکی خرابی کے باعث یہ تصاویر ویب سائٹ سے غیر معینہ مدت کے لیے غائب ہوگئی تھیں۔

ایف بی آئی ترجمان کے مطابق ایف بی آئی کو جب ان کی گمشدگی کے بارے میں معلوم ہوا تو انھوں نے حالیہ دنوں میں بحال کر دیا تاکہ عوام دیکھ سکیں۔

ہنگامی امداد

تصویر کے کاپی رائٹ FBI
Image caption اس تصویر کو 'پیٹاگون ایمرجنسی رسپانس' کا نام دیا گیا ہے
تصویر کے کاپی رائٹ FBI
Image caption پانی پھینکنے والی توپوں کی مدد سے آگ پر قابو پایا گیا

بیرونی نقصان

تصویر کے کاپی رائٹ FBI
Image caption اس تصویر کو 'پیٹاگون اوورہیڈ' کا نام دیا گیا
تصویر کے کاپی رائٹ FBI
Image caption ملبہ ہٹانے والی مشین ایک پھٹے ہوئے امریکی جھنڈے کو نکال رہی ہے اور اس تصویر کی عنوان ہے 'پینٹاگون ایکسٹیریئر'

جہاز کا ملبہ

تصویر کے کاپی رائٹ FBI
Image caption ایف بی آئی کی جانب سے اس کا نام 'پیٹاگون کا ملبہ' دیا گیا ہے
تصویر کے کاپی رائٹ FBI
Image caption اس فوٹو کو بھی 'پیٹاگون کا ملبہ' کہا گیا ہے

تفتیش کار

تصویر کے کاپی رائٹ FBI
Image caption جائے وقوعہ پر امدادی کارکنان معائنہ کر رہے ہیں
تصویر کے کاپی رائٹ FBI
Image caption تفتیش کار عمارت کے اندرونی حصے سے بیلچی کے مدد سے راکھ ہٹا رہے ہیں

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں