لینڈ سلائیڈ کے بعد کولمبیا میں ہنگامی صورت حال کا اعلان

موکوا تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption موکوا میں لوگ مایوسی کے عالم میں اپنے رشتہ داروں کو تلاش کر رہے ہیں

کولمبیا کے صدر نے ملک کے جنوب مغربی علاقے موکوا میں ہونے والی لینڈ سلائیڈ میں مرنے والوں کی تدفین کے ساتھ ملک میں 'معاشی، سماجی اور ماحولیاتی ایمرجنسی' کا اعلان کیا ہے۔

صدر یوان مینیول سانتوز نے کہا کہ حکومت اس انسانی المیے کو ترحیحاتی بنیاد پر لے رہی ہے اور اس کے لیے چار ہزار کروڑ پیسو یعنی یقریبا ایک کروڑ 40 لاکھ امریکی ڈالر مختص کر رہی ہے۔

٭ کولمبیا: لینڈ سلائیڈ میں 250 سے زیادہ ہلاکتیں

خیال رہے کہ فی الحال سنیچر کو ہونے والے لینڈ سلائڈ میں مرنے والے 262 افراد کی تدفین کے ساتھ ہی زندہ بچنے والوں کی تلاش کا کام بھی جاری ہے۔

عالمی امدادی ادارے ریڈ کراس نے خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کو بتایا کہ ابھی بھی انھیں زندہ بچنے والے افراد کے ملنے کی امید ہے کیونکہ ابھی اس واقعے کو 72 گھنٹے نہیں گزرے ہیں۔

بہر حال 40 ہزار افراد پر مشتمل آبادی والے شہر موکوا کے باشندوں کی امیدیں ختم ہو تی جا رہی ہیں اور وہ مایوسی کے عالم میں اپنے ان رشتہ داروں کو تلاش کر رہے ہیں جو سنیچر کو آنے والے مٹی، کیچڑ، پتھر اور پانی کے ریلے میں بہہ گئے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption لینڈ سلائڈ میں ہلاک ہونے والے 262 افراد کی تدفین کا کام شروع ہو گیا ہے

ملک کے جنوب مغربی علاقے موکوا میں زبردست بارشوں کی وجہ سے سیلاب کی صورت حال پیدا ہوگئی جس کی وجہ سے کیچڑ اور بڑی تعداد میں چٹانوں کے کھسکنے سے آس پاس کے علاقے اس کی زد میں آگئے۔

39 سالہ ارسی لوپیز جو ایک پیڑ کے تنے سے لٹک جانے کے سبب بچ گئیں انھوں نے اے ایف پی سے کہا کہ وہ اپنی 22 سالہ بیٹی دیانا وینیسا کو تلاش کر رہی ہیں۔ انھوں نے کہا: 'اسے زندہ پانے کی امید اب ختم ہوتی جا رہی ہے۔'

جو بچ گئے ہیں وہ اب انسانی بنیادوں پر دی جانے والی امداد کے منتظر ہیں۔ ہسپانوی زبان میں شائع ہونے والے اخبار 'ال سپیکٹیڈور' نے خبر دی ہے کہ 40 ٹن امدادی سامان راستے میں ہیں جن میں دو ہزار کھانے کے کٹ اور ایک ہزار شامیانے ہیں۔

ایک دوسرے اخبار 'ایل پائس' کے مطابق صدر سانتوز نے کہا کہ سات ہزار کمبل اور چھ ہزار چٹائیاں وہاں پہنچا دی گئی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption لینڈ سلائڈ کے سبب بڑے پیمانے پر تباہی آئی ہے

سنیچر کو کولمبیا کے باغی گروپ فارک نے شہر کی تعمیر نو میں تعاون کی پیشکش کی تھی لیکن ان کی شمولیت کو حکومت کی جانب سے منظوری ملنی ابھی باقی ہے۔

پادری عمر پارا نے کولمبیا کے ٹی وی کو بتایا کہ ہر کوئی اپنے حساب سے امدادی کام میں تعاون کر رہا ہے۔

صدر سانتوز نے عہد کیا ہے کہ موکوا کو پہلے سے بہتر بنایا جائے گا اور انھوں نے وزیر دفاع لوئی کارلوس ویلیگیس کو شہر کی تعمیر نو کا ذمہ سونپا ہے۔

لیکن صدر کے ناقدین کا کہنا ہے کہ شہر کو اس طرح کی آفات سے بچانے کے لیے بہت کچھ کیا جانا چاہیے تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں