شام میں مبینہ کیمیائی حملہ، 'کم از کم 58 ہلاک'

شام تصویر کے کاپی رائٹ EMC
Image caption ادلیب میڈیا سینٹر کی جانب سے جاری کی جانے والی تصویر

شام کے شمال مغربی علاقے میں مبینہ کیمیائی حملے کے نتیجے میں ’کم از کم 58 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔‘

شام میں کام کرنے والی انسانی حقوق کی تنظیم سیرین آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس کے مطابق شمال مغربی علاقے خان شیخون پر یہ حملہ یا تو شامی حکومت نے کیا ہے یا روسی طیاروں نے، جس کے بعد لوگوں کی سانسیں رکنے لگیں۔

مقامی کارکنان اور چند ویب سائٹوں پر تصاویر بھی شائع ہوئیں جن سے یہ معلوم ہوتا تھا کہ کئی افراد کی موت دم گھٹنے کی وجہ سے ہوئی۔

طبی عملے اور سرگرم کارکنوں کا کہنا ہے کہ جنگی جہازوں نے حملے کا نشانہ بننے والے افراد کو علاج معالجہ کرنے والے مقامی کلینکس کو بھی نشانہ بنایا۔

شامی فوج کے ذرائع نے حکومت کی جانب سے ایسے کسی بھی ہتھیار کے استعمال کی تردید کی ہے۔

جبکہ روسی وزیر دفاع کا اصرار ہے کہ اس علاقے میں کوئی فضائی کارروائی نہیں کی گئی۔

شامی فوج پر ادلب میں کلورین بم گرانے کا الزام

شام میں کمیونٹی کی مدد کے لیے غیر مسلح پولیس

اطلاعات کے مطابق مرنے والوں میں بڑی تعداد شہریوں کی ہے جن میں سے کم از کم نو بچے بھی شامل ہیں۔

حزب اختلاف کے حمایتی ادارے ادلب میڈیا سینٹر نے تصاویر جاری کی ہیں جن میں بڑی تعداد میں لوگوں کا علاج ہوتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے اور ان تصاویر میں سات بچوں کی لاشیں بھی نظر آ رہی ہیں۔ لیکن ان تصاویر کی تصدیق نہیں کی جا سکی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

یاد رہے کہ شامی حکومت نے مسلسل اس الزام کی تردید کی ہے کہ وہ کیمیائی ہتھیار استعمال کرتی رہی ہے۔ لیکن اقوام متحدہ اور تنظیم برائے ممانعت کیمیائی ہتھیار نے پچھلے سال اکتوبر میں تحقیق کے بعد کہا تھا کہ شامی حکومت 2014 سے 2015 کے درمیان کم از کم تین دفعہ کلورین کو بطور ہتھیار استعمال کیا تھا۔

اس تحقیق میں یہ بات بھی سامنے آئی تھی کہ دہشت گرد تنظیم دولت اسلامیہ کے جنگجوؤں نے بھی سلفر مسٹرڈ نامی کیمیائی مادہ بطور ہتھیار استعمال کیا تھا۔

یہ واقعہ ادلب صوبہ میں پیش آیا جس کا انتظام شامی حکومت کے باغی جنگجوؤں اور القاعدہ سے منسلک جہادی گروہ حیات تحریر الشمس کے ہاتھ میں ہے۔

اس خطے میں اکثر و بیشتر فضائی حملے ہوتے ہیں جو شامی حکومت اور ان کے اتحادی روسی طیارے کرتے ہیں یا امریکہ کی قیادت میں اتحاد جو دہشت گرد تنظیم دولت اسلامیہ کے خلاف بمباری کرتا ہے۔

اسی بارے میں