مقبوضہ غربِ اردن میں کار حملہ، ایک ہلاک

مقبوضہ غربِ اردن میں کار حملہ، ایک ہلاک
Image caption فوج نے ڈرائئور کے بارے میں مزید تفصیل نہیں دی۔

اسرائیلی فوج کا کہنا ہےکہ مقبوضہ غربِ اردن میں گاڑی چڑھانے کے ایک حملے میں ایک اسرائیلی شہری ہلاک اور ایک زخمی ہوا ہے۔

فوج کے مطابق یہ حادثہ اوفرا نامی یہودی بستی کے قریب پیش آیا اور گاڑی کے ڈرائیور کو حراست میں لے لیا گیا ہے۔

اس حملے کے ساتھ ہی اکتوبر دو ہزار پندرہ سے اب تک گاڑی چڑھانے اور چاقو سے کیے جانے والے حملوں میں ہلاک ہونے والے اسرائیلی شہریوں کی تعداد 41 ہو گئی ہے۔

خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق اسی دوران 242 فلسطینی بھی مارے گئے ہیں۔ اسرائیل کا کہنا ہے کہ ان میں سے 162 دراصل حملہ آور تھے۔ باقی اسرائیل کے ساتھ جھڑپوں میں مارے گئے ہیں۔

فوج نے ڈرائیور کے بارے میں مزید تفصیلات جاری نہیں کیں تاہم گاڑی کی تصاویر سے واضح ہے کہ گاڑی پر فلسطینی نمبر پلیٹ لگی ہوئی تھی۔

زخمی ہونے والے شخص کو موقع پر طبی امداد دی گئی، جس کے بعد انھیں ہسپتال لے جایا گیا۔

عینی شاہدوں کے مطابق گاڑی اوفرا کے ایک بس سٹیشن کی طرف آرہی تھی اور پھر وہاں کھڑے دو اسرائیلوں کی طرف کافی تیزی سے آئی۔

اسرائیل نے فلسطینی قیادت پر الزام لگایا ہے کہ وہ لوگوں کو اس طرح کے حملوں پر اکساتے ہیں، جبکہ فلسطینیوں کا کہنا ہے کہ اس طرح کے حملوں کی وجہ کئی دہائیوں پر محیط اسرائیلی قبضے سے پیدا ہونے والا غصہ اور ناامیدی ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں