سٹاک ہوم ٹرک حملہ: ملزم نے ’اعترافِ جرم کر لیا‘

سویڈن تصویر کے کاپی رائٹ Swedish Police

سویڈن کے دارالحکومت سٹاک ہوم میں ٹرک حملہ کرنے کے الزام میں زیرحراست مشتبہ شخص کے وکیل کا کہنا ہے کہ ملزم نے ’دہشت گردی کے جرم‘ کا اعتراف کر لیا ہے۔

ازبکستان سے تعلق رکھنے والے 39 سالہ رحمت عقیلوف نے عدالت میں حملے کی ذمہ داری قبول کی۔

خیال رہے کہ گذشتہ جمعے کو مشتبہ شخص نے ایک ٹرک کو ایک ڈیپارٹمینٹل سٹور سے ٹکرا دیا تھا جس سے چار افراد ہلاک ہوگئے تھے۔ اس حملے میں کئی افراد زخمی بھی ہوئے جن میں سے دو کی حالت تشویش ناک ہے۔

ان کے وکیل جوہان ایرکسن کا کہنا ہے کہ ’صورتحال یہ ہے کہ انھوں نے دہشت گردی کے جرم کا اعتراف کیا ہے اور اسے قبول کیا ہے چنانچہ انھیں حراست میں رکھا جائے گا۔‘

رحمت عقیلوف کو ہتھکڑیوں میں عدالت لایا گیا تھا۔

سیشن کورٹ میں موجود بی بی سی کے نامہ نگار کے مطابق اس موقع پر سخت حفاظتی انتظامات کیے گئے تھے۔

رحمت عقیلوف نے سر پر سبز رنگ کی چادر اوڑھ رکھی تھی اور سماعت سے پہلے ان کو اسے اتارنے کو کہا گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

سویڈن کی پولیس کا کہنا ہے کہ سکیورٹی اداروں کو ماضی میں رحمت عقیلوف کے بارے میں اطلاعات تھیں۔

پولیس کے مطابق انھیں سویڈن میں رہائش کی اجازت نہیں ملی تھی اور وہ شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کرچکے تھے۔

مبینہ طور پر حملے کے بعد وہ جائے وقوعہ سے بھاگ گئے تھے تاہم انھیں چند گھنٹوں کے بعد سٹاک ہوم کے شمال میں نواحی علاقے سے گرفتار کر لیا گیا تھا۔

اطلاعات کے مطابق ازبکستان میں ان کی ایک بیوی اور چار بچے ہیں اور وہ پیسے کمانے کے غرض سے سویڈن آئے تھے۔

پولیس کے مطابق سنہ 2014 میں سویڈن میں رہائش کی درخواست دینے کے بعد انھیں دسمبر 2016 میں بتایا گیا تھا کہ ان کے پاس ملک چھوڑنے کے لیے صرف چار ہفتے ہیں۔

اس کے بعد وہ لاپتہ ہوگئے اور فروری میں انھیں باقاعدہ طور پر مطلوب افراد کی فہرست میں شامل کر دیا گیا تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں