اسرائیلی جیلوں میں فلسطینی قیدیوں کی بھوک ہڑتال

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

اسرائیلی جیلوں میں قید ایک ہزار سے زیادہ فلسطینی قیدیوں نے جیلوں میں انتہائی برے حالات کے خلاف اجتماعی بھوک ہڑتال کا اعلان کر دیا ہے۔

اس مہم کی قیادت فلسطینی قیدی مروان برغوتی کر رہے ہیں جو کہ پانچ اسرائیلی شہریوں کے قتل کے جرم میں سزا کاٹ رہے ہیں۔

مروان برغوتی کے بارے میں ماضی کہا جا چکا ہے کہ وہ فلسطینی صدر محمود عباس کی جگہ لے سکتے ہیں۔

ان قیدیوں کی مہم کی حمایت میں مقبوضہ مغربی کنارے مظاہرے کیے جا رہے ہیں اور بیتھلحم میں فلسطینی نوجوانوں اور اسرائیلی فورسز کے درمیان جھڑپیں بھی ہوئی ہیں۔

یہ خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ 1187 قیدیوں کی جانب سے کی جانے والی اس اجرماعی بھوک ہڑتال کی وجہ سے فلسطینی علاقوں میں کشیدگی بڑھ سکتی ہے۔

اسرائیل میں فلسطینی قیدیوں کا معاملہ اسرائیل اور فلسطینیوں کے درمیان تناؤ کا باعث رہا ہے

فلسطینی عوام ان قیدیوں کو سیاسی قیدی مانتے ہیں جبکہ ان میں سے بہت کو اسرائیل پر حملے کرنے کے الزامات کے تحت سزائیں دی گئی ہیں۔

بہت سے فلسطینی شہریوں کو ’انتظامی حراست‘ کے تحت گرفتار کتا گیا ہے جس میں اسرائیلی فورسز کسی بھی مشکوک شخص کو بغیر فردِ جرم عائد کیے چھ ماہ تک زیرِ حراست رکھ سکتی ہیں۔

گذشتہ برس کے اختتام یک تقریباً 7000 فلسطینی قیدی اسرائیلی جیلوں میں تھے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں