ملالہ صرف میری بیٹی نہیں، دوست بھی ہے: تورپیکئی یوسفزئی

طور پیکائی
Image caption ملالہ کی والدہ تور پیکئی یوسف زئی کو کم ہی لوگ پہچانتے ہوں گے

گذشتہ پانچ سالوں میں ملالہ یوسف زئی دنیا کی سب سے معروف نوجوان لڑکی بن گئی ہیں۔ سکول جانے والی لڑکی ملالہ پر پاکستان میں گولی چلائی گئی، پھر انھوں نے سرجری کے بعد برمنگھم (برطانیہ ) میں اپنی نئی زندگی کا آغاز کیا، پھر تمام لڑکیوں کے لیے تعلیم کی مہم چلائی، امن کا نوبیل انعام حاصل کیا اور اپنی کہانی سے دنیا کو تحریک دی۔

٭ملالہ کے لیے نیا اعزاز 'میسینجر آف پیس'

٭ملالہ دنیا کی سب سے کم عمر ’پیامبرِ امن‘ بن گئیں

اب ان کی والدہ تور پیکئی یوسف زئی سامنے آئی ہیں اور انھوں نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے بتایا ہے کہ گذشتہ پانچ سالوں میں کس طرح ان کی اپنی زندگی تبدیل ہو گئی ہے۔

انھوں نے کہا: 'سب کو پیچھے چھوڑ کر آنا بہت مشکل تھا۔ ہمیں اندازہ نہیں تھا کہ ہمیں غیر ملک میں رہنا پڑے گا۔

'جب دوسرے لوگ ملک چھوڑتے ہیں تو وہ ہر طرح کی پریشانی کا سامنا کرنے کے لیے تیار رہتے ہیں لیکن ہم تیار نہیں تھے۔ ہمیں اچانک پاکستان چھوڑنا پڑا تھا۔ حملے نے سب کچھ بدل دیا۔ ہماری توجہ ملالہ کی زندگی پر مرکوز تھی۔'

بہت کم لوگ تور پیکئی کو ان کی تصویر سے پہچان سکتے ہیں کیونکہ جب کبھی بھی ملالہ اپنے مشن کے فروغ کے لیے کسی بڑے جلسے میں شرکت کرتی ہیں ان کے ساتھ ان کے والد ضیاء الدین رہتے ہیں اور اپنی بیٹی کی کامیابیوں کے بارے میں ان کا کئی بار انٹرویو شائع ہو چکا ہے۔

دریں اثنا ملالہ کی والدہ نے برمنگھم میں کنبے کے دوسرے افراد کی طرح اپنا اہم لیکن سادہ کردار برقرار رکھا ہے۔

ملالہ کی والدہ کہتی ہیں: 'جب ملالہ ہسپتال میں زیر علاج تھیں تو ہم سب ان کی تیمار داری میں بہت مشغول تھے۔ پھر اس نے ایک کتاب لکھی اور ہم سب اس میں مشغول ہو گئے۔ اسی سبب ہمیں لوگوں کے سامنے آنے کا موقع نہیں ملا۔‘

'لیکن اب میں لوگوں میں تعلیمی بیداری کے لیے کوشاں ہوں اس لیے اب سے میں اس طرح کی چیزوں میں زیادہ شامل رہوں گی۔ لیکن اگر یہ انٹرویو میری مادری زبان میں ہوتا تو یہ میرے لیے زیادہ آسان ہوتا۔'

یہ واضح ہے کہ تور پیکئی کے پاس بتانے کے لیے اپنی کہانی ہے۔ وہ اب بھی ہسپتال میں ملالہ کی زندگی اور موت کو یاد کرکے بظاہر بے چین ہو جاتی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ملالہ دنیا بھر میں خواہ کتنی عظیم کیوں نہ ہوں وہ گھر میں ایک ٹین ایج لڑکی ہیں

ان کی مٹھیاں بھنچنے لگتی ہیں وہ آبدیدہ ہو جاتی ہیں لیکن پھر جلد ہی ان کی مسکراہٹ لوٹ آتی ہے جب وہ اپنی بیٹی کی موجودہ زندگی کے بارے میں سوچتی ہیں کہ اسے کیا کامیابی ملی ہے اور مستقبل میں اس کے لیے کیا ہے۔ تور پیکئی کے لیے ملالہ کی زندگی کا ہر سال بونس یا ایک عطیہ ہے۔

انھوں نے کہا: 'گذشتہ سال میں نے اس کے برتھ ڈے کارڈ پر لکھا کہ تم میری چار سال کی بیٹی ہو کیونکہ اب میں حملے کے بعد سے اس کے سال کا شمار کرتی ہوں۔ یہ ایسا ہے جیسے حملے کے بعد وہ دوبارہ پیدا ہوئی ہے۔'

تور پیکئی کی زندگی اب برطانیہ میں جڑیں جما چکی ہے وہ ملالہ اور اپنے دو بیٹوں کی دیکھ بھال کرتی ہیں۔ نوبیل کا امن انعام جیتنے اور دنیا بھر کے رہنماؤں سے ملنے کے باوجود ملالہ سے کہا جاتا ہے کہ وہ اپنے کمرے کی صفائی کرے اور اپنی دیکھ بھال خود کرے۔

درحقیقت جب وہ اپنی بیٹی کے ساتھ اپنے روزانہ کے کام کا ذکر کرتی ہیں تو ایسا لگتا ہے کہ جیسے کوئی ماں اس صدی کی اپنی ٹین ایج لڑکی کے ساتھ سلوک کر رہی ہو۔

انھوں نے بتایا: 'وہ اچھی طرح نہیں کھاتی ہے اور زیادہ پانی نہیں پیتی ہے۔ وہ وقت پر سونے نہیں جاتی ہے اور دیر رات تک جاگتی رہتی ہے۔ ہم اس کہتے ہیں کہ پھل کھائے اور عبادت کرے۔ وہ اپنے بھائیوں کو یہی بات کہتی ہے لیکن خود نہیں کرتی۔'

ہر چند کےتور نے خود پاکستان میں تعلیم حاصل نہیں کی لیکن اب وہ برمنگھم میں انگریزی کی تعلیم حاصل کر رہی ہیں اور انھوں نے اس کے ذریعے اپنے دوستوں کا ایک حلقہ بنایا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP/Getty Images
Image caption ملالہ یوسف زئی اپنے والدین اور کینیڈا کے وزیر اعظم کے ساتھ نظر آ رہی ہیں

وہ بتاتی ہیں کہ 'ان میں سے بعض سوات کی ہیں اور میں انھیں پہلے سے جانتی ہوں۔ اور حال میں ایک اور شناسا پیشاور سے آ گئے ہیں۔

'میری انگریزی کی کلاس میں پاکستان سے تو کوئی نہیں لیکن عراق اور ایران سے لوگ ہیں ایک افغانستان سے بھی ہے۔ ہم ساتھ میں پارٹی کرتے ہیں۔ میں چاول، مرغی، مچھلی بناتی ہوں اور وہ میرے کھانے کو پسند کرتے ہیں۔'

برطانیہ میں انگریزی سیکھنے سے 45 سالہ طور میں آزادی کا احساس پیدا ہوا ہے۔

وہ کہتی ہیں: 'پہلے پہل تو جب لوگ انگریزی میں بات کرتے تھے تو مجھے سمجھ میں ہی نہیں آتا تھا۔ یس اور نو جیسے الفاظ کہنے میں بھی دقت ہوتی تھی لیکن اب اس میں بہتری آئی ہے اور میں آگے بڑھ رہی ہوں۔ اس سے زندگی بہتر ہوئی ہے، سفر کرنے اور ڈاکٹر کے کے یہاں جانے میں آسانی ہوئی ہے۔'

ملالہ اب 19 سال کی ہیں اور اب وہ یونیورسٹی جانے والی ہیں جہاں وہ سیاست، فلسفہ اور معاشیات کی تعلیم حاصل کریں گی۔ ان کے لیے بہت ساری پیشکش ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption تور پیکئی کہتی ہیں کہ انہیں سوات بہت یاد آتا ہے

'ہم اس کے لیے بہت خوش ہیں۔ جس دن اسے پیشکش ہوئی تھی ہم خوشی سے چیخ پڑے تھے۔ اس کی زندگی کا ہر لمحہ ہمیں خوشی دیتا ہے۔'

لیکن پھر اس کے ساتھ ان کی آنکھوں میں آنسو آ جاتے ہیں جب انھیں یہ خیال آتا ہے کہ ان کی بچی گھونسلہ چھوڑ کر چلی جائے گي۔

'میں یہ سوچ کر پریشان ہوتی ہوں کہ وہ کیا کھائے گي اور اپنے لیے کیسے پکائے گي۔ یہ مشکل ہے لیکن مجھے اسے قبول کرنا پڑے گا۔ میں اسے بہت یاد کروں گی اور یہ گھر اس کے بغیر خالی خالی لگے گا۔ ملالہ صرف میری بیٹی نہیں بلکہ میری دوست بھی ہے۔'

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں