مدینہ میں خود کش حملے کے الزام میں 46 افراد گرفتار

تصویر کے کاپی رائٹ ZILLUR REHMAN
Image caption مدینہ خود کش حملے میں چار سکیورٹی اہلکار ہلاک ہوئے تھے

سعودی حکام کا کہنا ہے کہ انھوں نے گذشتہ برس مدینہ شہر میں خود کش حملے کے الزام میں 46 افراد کو گرفتار کیا ہے۔

گرفتار ہونے والے افراد میں زیادہ تر سعودی باشندے ہیں تاہم 14 غیر ملکیوں کو بھی حراست میں لیا گیا ہے۔

سعودی عرب کی وزارت داخلہ کے ترجمان منصور الترکی نے کہا کہ گرفتار ہونے والے اشخاص میں سے 22 سعودی شہری ہیں جبکہ 14 دیگر افراد کا تعلق پاکستان، یمن، افغانستان، مصر، اردن اور سوڈان سے ہے۔

ترجمان نے کہا کہ یہ سیل اب بھی متحرک ہے اور اگر ہمیں مزید کوئی اطلاع ملی تو ہم مزید افراد کو گرفتار کر سکتےہیں۔

سعودی عرب کا کہنا ہے کہ یہ افراد اس گروہ کے ارکان ہیں جو اس حملے کا ذمہ دار ہے۔

* 'مسجد نبوی کے قریب خودکش دھماکہ، چار اہلکار ہلاک'

اس حملے میں چار سکیورٹی اہلکار ہلاک ہوئے تھے۔

تاحال یہ واضح نہیں ہے کہ حالیہ گرفتاریاں کب عمل میں آئیں۔

حملوں کے وقت اس کا الزام دولتِ اسلامیہ پر عائد کیا گیا تھا۔ یہ حملہ گذشتہ برس جولائی میں رمضان کے آخری دنوں میں کیا گیا۔

سعودی وزارت داخلہ کے مطابق شام کو مغرب کے وقت ایک شخص مسجد کے قریب پارکنگ کے ذریعے مسجد میں داخل ہونے کی کوشش کر رہا تھا اور جب سکیورٹی گارڈز نے اسے روکا تو اس نے خود کو دھماکے سے اڑا دیا۔ اس حملے میں چار سکیورٹی اہلکار ہلاک اور پانچ زخمی ہو گئے تھے۔

دنیا بھر سے مسلمانوں نے اپنے مقدس ترین مقامات میں سے ایک مسجد نبوی کے قریب ہونے والے اس خودکش حملے کی مذمت کی تھی۔

اسی بارے میں