’مشرق وسطیٰ میں امن معاہدے کا قوی امکان ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption خیال رہے کہ محمود عباس کے ساتھ ڈونلڈ ٹرمپ کی یہ پہلی ملاقات ہے۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے فلسطینی صدر محمود عباس سے ملاقات کے بعد کہا ہے کہ مشرق وسطیٰ میں امن معاہدے کا قوی امکان ہے۔

فلسطینی صدر کے ساتھ وائٹ ہاؤس میں ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں انھوں نے اس عہد کا اظہار کیا کہ ’ہم یہ کر کے دکھائیں گے۔‘

فلسطین تنازعے کا حل، ایک ملک دو ریاستیں؟

حماس نے نئی تاریخی پالیسی کا اعلان کر دیا

خیال رہے کہ محمود عباس کے ساتھ ڈونلڈ ٹرمپ کی یہ پہلی ملاقات ہے۔ یہ ملاقات اسرائیلی وزیراعظم کے دورہ امریکہ کے ڈھائی ماہ بعد ہو رہی ہے۔

صدر عباس نے اپنے امریکی ہم منصب سے کہا ہے کہ وہ 1967 سے قبل کی سرحدوں کی بنیاد پر دو ریاستی حل کی بنا پر امن قائم کرنا چاہتے ہیں۔

انھوں نے صدر ٹرمپ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ’جنابِ صدر آپ کے ساتھ ہمیں اب امید ہے۔‘

تاہم صدر ٹرمپ دو ریاستی حل کے بارے میں واضح موقف دینے سے قاصر رہے۔

خیال رہے کہ اس سال فروری میں صدر ٹرمپ نے کہا تھا کہ ’دو ریاستی حل یا ایک ریاستی حل پر غور کرنے کے بعد مجھے وہی پسند ہے جو دونوں فریقین کو پسند ہے۔‘

بدھ کے روز صدر ٹرمپ کا کہنا تھا کہ خطے میں امن تب تک نہیں آ سکتا جب تک دونوں پارٹیاں تشدد کو مزید پھیلنے سے نہ روکیں۔

صدر محمود عباس پر دباؤ ہے کہ وہ اسرائیل کے ساتھ لڑائی میں ہلاک ہونے والوں اور اسرائیلی جیلوں میں قید فلسطینی قیدیوں کے گھر والوں کی مالی امداد کو روکیں۔

اسرائیلی حکومت کا کہنا ہے کہ یہ مالی امداد دہشتگردی کو ہوا دیتی ہے۔ تاہم فلسطینی حکام کا کہنا ہے کہ ایسا کرنا صدر عباس کے لیے انتہائی مشکل ہوگا کیونکہ وہ فلسطین میں اپنی مقبولیت کھو رہے ہیں۔

واشنگٹن میں بی بی سی کی نامہ نگار باربرا پلیٹ کا کہنا ہے کہ فلسطینی حکام ابتدا میں صدر ٹرمپ کے اسرائیل حامی بیانات سے پریشان تھے۔ تاہم صدر ٹرمپ کے ایک سفیر نے انھیں یقین دہانی کروائی ہے کہ ٹرمپ انتظامیہ امن معاہدے کے بارے میں سنجیدہ ہیں، جس میں بظاہر مارچ میں عرب لیگ کی جانب سے مجوزہ پلان کی حمایت ہو۔

2002 میں عرب پیس انیشیٹوو نے اسرائیل سے کہا تھا کہ وہ 1967 کی عرب اسرائیل جنگ میں قبضہ کیے گئے تمام علاقے واپس کرے اور عرب ممالک سے تعلقات میں بہتری کے لیے ایک آزاد فلسطینی ریاست کو قبول کرے۔

اسی بارے میں