روسی مداخلت کی تحقیقات:امریکی سینیٹ کا مائیکل فلِن سے دستاویزات کا باضابطہ مطالبہ

مائیکل فِلن تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption فلن ریٹائرڈ لیفٹیننٹ جنرل ہیں اور انھوں نے روسی سفیر کے ساتھ روس پر عائد امریکی پابندیوں کا معاملہ اٹھانے کے بارے میں ٹرمپ انتظامیہ سے غلط بیانی سے کام لیا تھا

امریکی صدارتی انتخاب میں مبینہ روسی مداخلت کی تحقیقات کرنے والے سینیٹ کے ایک پینل نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے سابق قومی سلامتی کے مشیر مائیکل فلِن سے دستاویزات کا باضابطہ مطالبہ کیا ہے۔

سینیٹ کی انٹیلیجنس کمیٹی کا کہنا ہے کہ مائیکل فلِن تحقیقات میں رضاکارنہ طور پر تعاون کرنے میں ناکام رہے ہیں۔

خیال رہے کہ مائیکل فلن کو روسی سفیروں کے ساتھ ان کی ملاقاتوں کی معلومات ظاہر نہ کرنے پر فروری میں برخاست کر دیا گیا تھا۔

٭ٹرمپ نے ایف بی آئی کے ڈائریکٹر کو برطرف کر دیا

'اوباما نے ٹرمپ کو فلِن کے بارے میں خبردار کیا تھا'

دوسری جانب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ گذشتہ روز ایف بی آئی کے ڈائریکٹر جیمز کومی کو بھی ان کے عہدے سے برطرف کر چکے ہیں۔

اس حوالے سے وائٹ ہاؤس کی ترجمان کا کہنا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ امریکی صدر منتخب ہوتے وقت ہی جیمز کومی کو برطرف کرنے کے بارے میں غور کر رہے تھے۔

امریکی سینیٹ کی انٹیلیجنس کمیٹی کا کہنا ہے کہ اس نے مائیکل فِلن کی جانب سے 28 اپریل کو تحقیقات سے متعلق دستاویزات جمع نہ کروانے کے بعد سمن جاری کیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption سینیٹ کی انٹیلیجنس کمیٹی کا کہنا ہے کہ مائیکل فلِن تحقیقات میں رضاکارنہ طور پر تعاون کرنے میں ناکام رہے ہیں

واضح رہے کہ فلن کے روس کے ساتھ روابط کے بارے میں امریکی تفتیشی ادارہ ایف بی آئی اور ہاؤس اور سینیٹ کی انٹیلی جنس کمیٹیاں تحقیقات کر رہے ہیں۔ وہ اس بارے میں چھان بین کر رہے ہیں کہ آیا روس نے امریکی انتخابات پر اثرانداز ہونے کی کوشش کی تھی۔

فلن ریٹائرڈ لیفٹیننٹ جنرل ہیں اور انھوں نے روسی سفیر کے ساتھ روس پر عائد امریکی پابندیوں کا معاملہ اٹھانے کے بارے میں ٹرمپ انتظامیہ سے غلط بیانی سے کام لیا تھا۔

اس کے علاوہ گذشتہ دنوں وائٹ ہاؤس نے بھی تصدیق کی تھی کہ سابق امریکی صدر براک اوباما نے ڈونلڈ ٹرمپ کو خبردار کیا تھا کہ مائیکل فلِن کو قومی سلامتی کا مشیر نہ بنایا جائے۔

اوباما انتظامیہ کے ایک سابق اہلکار کا کہنا تھا کہ صدر اوباما نے اپنے جانشین ٹرمپ کو نومبر میں امریکی صدر منتخب ہونے کے 48 گھنٹے کے اندر اندر وائٹ ہاؤس کے اوول آفس میں ملاقات کے دوران اس بارے میں خبردار کیا تھا۔

اسی بارے میں