روس سے روابط: سابق ایف بی آئی سربراہ تحقیقات کریں گے

رابرٹ مولر تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption رابرٹ مولر کو اس کام کے لیے وسیع اختیارات حاصل ہوں گے

روس کی جانب سے امریکی انتخابات پر اثر انداز ہونے اور ڈونلڈ ٹرمپ کی انتخابی مہم سے تعلق کے معاملے کی تحقیقات اب ایف بی آئی کے سابق سربراہ رابرٹ مولر کریں گے۔

رابرٹ مولر کے نام کا اعلان کرتے ہوئے نائب اٹارنی جنرل کا کہنا تھا کہ یہ بات عوامی مفاد میں تھی کہ اس کام کے لیے باہر کے آدمی کا انتخاب کیا جاتا۔

امریکہ میں دونوں جماعتوں کے سیاست دانوں کی جانب سے اس تقرری کو سراہا گیا ہے۔

٭ 'ٹرمپ فلن کے روس سے تعلق کی تفتیش کا خاتمہ چاہتے تھے‘

ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے ایف بھی آئی کے حالیہ ڈائریکٹر جیمز کومی کو برطرف کیے جانے کے بعد اس معاملے میں خصوصی پراسیکیوٹر کا مطالبہ بڑھنے لگا تھا۔

ایف بی ائی اور کانگرس ڈونلڈ ٹرمپ کی ٹیم اور روس کے درمیان ممکنہ تعلق کی چھان بین کر رہے ہیں۔

امریکی خفیہ اداروں کا حیال ہے کہ ماسکو نے امریکی انتخاب کو رپبلکن کے حق میں موڑنے کی کوشش کی۔

رابرٹ مولر کی تعیناتی کے ایک گھنٹے بعد ہی ڈونلڈ ٹرمپ نے پیش گوئی کر دی کہ تحقیقات میں انھیں اور ان کی ٹیم کو بے قصور قرار دیا جائے گا۔

اس سے پہلے وائٹ ہاؤس کا موقف تھا کہ اس معاملے میں باہر کے کسی شخص سے تحقیقات کروانے کی ضرورت نہیں ہے۔

ڈیمو کریٹ پارٹی کے سینیٹر چک شومر کا کہنا ہے کہ ’مولر اس کام کے لیے بالکل مناسب شخص ہیں۔‘

رابرٹ مولر کو اس کام کے لیے وسیع اختیارات حاصل ہوں گے۔ ان کا کہنا تھا: ’میں یہ ذمہ داری قبول کرتا ہوں اور اس کے لیے اپنی بھرپور صلاحیتیں استعمال کروں گا۔‘

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں