’وائٹ ہاؤس میں آوازیں بلند، بحث و تکرار‘

وائٹ ہاؤس تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

امریکی اخبار واشنگٹن پوسٹ میں شائع ہونے والی ایک خبر کے حوالے سے امریکہ کے قومی سلامتی کے مشیر ایچ آر میک ماسٹر کی وائٹ ہاؤس میں پریس کانفرنس کے بعد خبر رساں ویب سائٹ بز فیڈ کے نمائندے نے ٹویٹ کی کہ وائٹ ہاؤس میں صدر ٹرمپ کے قریبی ساتھیوں کے درمیان تکرار ہوئی ہے۔

واضح رہے کہ اخبار واشنگٹن پوسٹ کے مطابق امریکی صدر نے روسی سفیر کے ساتھ بات چیت کے دوران کچھ خفیہ معلومات کا تبادلہ کیا۔ یہ گفتگو دولتِ اسلامیہ کے ایک منصوبے کے بارے میں ہو رہی تھی۔

ٹرمپ کا روس کو حقائق بتانے کے ’مکمل اختیار‘ کا دفاع

'ٹرمپ فلن کے روس سے تعلق کی تفتیش کا خاتمہ چاہتے تھے‘

اس خبر کی وضاحت کے لیے قومی سلامتی کے مشیر ایچ آر میک ماسٹر کی وائٹ ہاؤس میں پریس کانفرنس ہوئی جس میں انھوں نے اس خبر کی تردید کی اور کہا کہ 'جس طرح سے یہ خبر بیان کی گئی ہے وہ غلط ہے۔ میں اس وقت کمرے میں خود موجود تھا۔'

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption صدر ٹرمپ نے وائٹ ہاؤس میں روسی سفیر اور دوسرے رہنماؤں سے ملاقات کی تھی

خبر رساں ویب سائٹ بز فیڈ کے وائٹ ہاؤس کے نمائندے ایڈریان کیراس قئیلو نے اپنی ٹویٹس میں ذکر کیا کہ اس پریس کانفرنس کے بعد وائٹ ہاؤس میں مختلف صحافی مزید معلومات کے لیے انتظار کر رہے تھے جب صدر ٹرمپ کے قریبی رفقا 'سٹیو بینن، شان سپائسر، سارہ سینڈرز اور مائیک ڈبکے کیبینٹ روم میں جاتے ہوئے دیکھے گئے اور وہ خوش نہیں لگ رہے۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter

نو منٹ کے دوران ایڈریان کیراس قئیلو نے پانچ ٹویٹس کیں اور بتایا کہ' اس کمرے میں جہاں یہ سینیئر اہلکار جمع ہوئے ہیں وہاں سے چیخنے کی آوازیں آ رہی ہیں۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter

اگلی ٹویٹ میں انھوں نے لکھا کہ 'راہداری میں موجود صحافیوں کو سمجھ نہیں آرہا کہ اس تناؤ کے ماحول میں کس سمت کھڑے ہوں کیونکہ وہاں اتنا کچھ ہو رہا ہے۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter

ایڈریان کیراس قئیلو کی اس کے بعد کی جانے والی ٹویٹ سب سے اہم تھی جس کو 21 ہزار سے زیادہ ری ٹویٹ کیا گیا۔ اس میں انھوں نے لکھا: 'وائٹ ہاؤس کے کمیونیکیشن اہلکاروں نے ٹی وی کی آواز بہت زیادہ بڑھا دی جب ان کو احساس ہوا کہ ہم سب کو بینن، سپائسر اور سینڈرز کے کمرے میں ہونے والی چیخنے کی آواز آرہی تھی۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter

آخری ٹویٹ میں انھوں نے لکھا: 'سینڈرز نے کہا کہ اب اور کچھ نہیں ہے کہنے کو۔'

.

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں