ماچیسٹر حملہ: تحقیقات میں پیش رفت، برطانیہ میں خطرے کی سطح کم کر دی گئی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

برطانوی وزیر اعظم ٹریزا مے نے ملک بھر میں دہشت گردی کے خطرے کی سطح کو سنگین سے کم کر کے شدید کر دیا ہے۔

اس اعلان کا مطلب ہے کہ ملک میں دہشت گرد کارروائی ہونے کے امکانات ہیں لیکن زیادہ امکانات نہیں ہیں۔

برطانوی حکومت نے اعلان کیا ہے کہ پیر سے پولیس کی مدد کے لیے تعینات کی گئی فوج واپس بیرکوں میں چلی جائے گی۔

’کوئی بھی نمازی میڈیا سے بات نہیں کرے گا‘

مانچیسٹرحملہ: ’امریکہ کے ساتھ معلومات کا تبادلہ بند ‘

مانچیسٹر خود کش حملے پر لیبیائی جہادی عناصر کی چھاپ

اس سے قبل ہفتہ کو پولیس نے مانچیسٹر کے علاقے موس سائیڈ سے لوگوں کا انخلا کروایا تھا کیونکہ مانچیسٹر ایرینا میں ہونے والے دھماکے کی تفتیش کے دوران کارروائی کی گئی تھی۔

پولیس کا کہنا تھا کہ لوگوں کا انخلا حفاظتی طور پر کیے گیا تھا۔

برطانوی وزیر اعظم نے یہ اعلان ایمرجنسی کمیٹی کوبرا کے اجلاس کے بعد ہفتہ کو کیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

انھوں نے کہا کہ پولیس کی جانب سے متعدد کارروائیوں کے بعد خطرہ کم ہو گیا ہے۔ یاد رہے کہ مانچیسٹر ایرینا میں دھماکے کے بعد ملک بھر میں خطرے کی سطح سنگین کر دی گئی تھی۔

دوسری جانب پولیس کا کہنا ہے کہ تحقیقات میں تیزی سے پیش رفت ہو رہی ہے۔

برطانیہ کے سینیئر ترین انسداد دہشت گردی کے افسر مارک راؤلی نے کہا کہ مانچیسٹر حملے کے حوالے سے مزید گرفتاریاں کی جائیں گی۔

'ہمیں بم کی تیاری کے بارے میں مزید معلومات ملی ہیں اور ابھی مزید کام ہونا باقی ہے۔'

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں