صدر ٹرمپ کے ساتھ سخت مصافحہ جان بوجھ کر کیا: فرانسیسی صدر

چند لمحوں بعد صدر ٹرمپ نے اپنا ہاتھ چھڑآنے کی کوشش کی تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption دونوں لیڈران کی ملاقات جمعرات کو برسلز میں نیٹو اجلاس سے پہلے ہوئی

فرانس کے صدر ایمینوئل میکخواں نے کہا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ساتھ سخت مصافحہ کوئی معصومانہ حرکت نہیں تھی بلکہ انھوں نے ایسا جان بوجھ کر کیا تھا۔

دونوں لیڈران نے اس غیر معمولی مصافحے کے دوران اپنی گرفت اتنی مضبوط رکھی کہ دونوں کے پنجے سفید ہوگئے۔

دونوں لیڈران کی ملاقات جمعرات کو برسلز میں نیٹو اجلاس سے پہلے ہوئی۔

اس غیر معمولی مصافحے کے دوران دونوں سربراہ ِ مملکت کئی سیکنڈز تک ایک دوسرے کو گھورتے رہے۔ لیکن چند لمحوں بعد صدر ٹرمپ نے اپنا ہاتھ چھڑانے کی کوشش کی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption صدر ٹرمپ نے اپنا ہاتھ چھڑانے کی کوشش کی

صدر میکخواں نے فرانسیسی روزنامے جرنل ڈو ڈیمانشے کو بتایا کہ ان کے ایسے کرنے کی وجہ عزت کمانا تھا۔

انھوں نے کہا ’ڈونلڈ ٹرمپ، ترک صدر یا روسی صدر کسی بھی چیز کے حوالے سے نظریہ رشتے کی مضبوطی کی بنیاد پر قائم کرتے ہیں، اور یہ چیز مجھے تنگ نہیں کرتی۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ’مجھے ایسی سفارتکاری پسند نہیں جو کہ عوامی تنقید کے نتیجے میں کی جائے۔ میں مذاکرات کے عمل کے دوران ہر چیز کو سنجیدگی سے لیتا ہوں۔ اور آپ کو اسی طرع عزت ملتی ہے۔‘