مسلم مخالف جذبات کے تحت دو افراد کو قتل کرنے والے جیریمی کی عدالت میں پیشی

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption جیریمی جوزف کرسٹیئن پہلے سے ایک سزا یافتہ مجرم ہے

امریکی ریاست اوریگن میں مسلمان خواتین کو دھمکانے پر دخل اندازی کرنے والے دو افراد کو چاقو کے وار سے قتل کرنے والے ملزم کو عدالت میں پیش کیا گیا۔

35 سالہ جیریمی جوزف کے خلاف قتل، اقدام قتل، ڈرانے دھمکانے اور ہتھیار رکھنے کے الزامات عائد کیے گئے ہیں۔

جیریمی جوزف کرسٹیئن پہلے سے ایک سزا یافتہ مجرم ہیں۔

* 'تم ہیرو تھے اور ہمیشہ ہیرو رہوگے'

* مسلمان خواتین کو دھمکانے سے روکنے پر دو افراد قتل

اپنی مختصر پیشی میں جیریمی جوزف نے نعرے بازی کی اور کہا ’آپ اسے دہشت گردی نہیں کہیں گے بلکہ یہ حب الوطنی ہے۔‘

انھوں نے یہ بھی کہا ’امریکہ کے دشمنوں کے لیے موت۔‘ ’آپ یہ ملک چھوڑ دیں اگر آپ کو آزدی سے نفرت ہے۔ فسطائیت کے مخالفین کے لیے موت۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ VAJRA ALAYA-MAITREYA
Image caption ہلاک ہونے والوں میں سے ایک 23 سالہ ٹالیسن مائرڈن نامکائی میشے تھے جبکہ دوسرے 53 سالہ رکی جان بیسٹ تھے

جیریمی جوزف نے خود پر عائد الزامات کے خلاف کوئی درخواست نہیں دی اور اب انھیں سات جون کو دوبارہ عدالت میں پیش کیا جائے گا۔

صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایک ٹویٹ میں اس حملے کو ناقابلِ قبول عمل قرار دیا تھا۔

اسی اثنا میں پورٹ لینڈ کے میئر دائیں بازو کے گروہ کی ایک ریلی روکنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

حملے میں ہلاک ہونے والوں میں سے ایک 23 سالہ ٹالیسن مائرڈن نامکائی میشے تھے جبکہ دوسرے 53 سالہ رکی جان بیسٹ تھے۔ وہ چار بچوں کے والد اور سابق فوجی تھے۔

حملہ آور نے گرفتار ہونے سے قبل ان کے علاوہ ایک اور شخص کو زخمی کر دیا تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں