’عالمی امن میں معمولی سی بہتری آئی ہے‘

امن تصویر کے کاپی رائٹ Science Photo Library
Image caption تحقیق میں کہا گیا ہے کہ اس سال دنیا 0.28 فیصد زیادہ پرامن ہے

آسٹریلیا کے ایک تھنک ٹینک کی تحقیق کے مطابق گذشتہ سال کے مقابلے میں اس سال دنیا میں امن کی صورتحال معمولی سی بہتر ہوئی ہے۔

تحقیق کے مطابق امریکہ میں ہم آہنگی میں کمی اور دہشت گردی میں اضافہ ہوا ہے۔

سڈنی میں قائم انسٹی ٹیوٹ فار اکانومکس اینڈ پیس نے جمعرات کو اپنی گلوبل پیس انڈیکس جاری کی جو کہ تنظیم کا خود ساختہ عالمی امن کا پیمانہ ہے اور دس سال سے شائع کیا جا رہا ہے۔

شام میں جاری جنگ کے آغاز سے اب تک یہ پہلا موقع ہے کہ اس انڈیکس میں بہتری آئی ہے۔

محققین کا کہنا ہے کہ دنیا کے مختلف علاقوں میں کشیدگی کا مختلف معیشتوں پر انتہائی برا اثر پڑتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ دنیا میں امن کے قیام کے لیے زیادہ رقم خرچ کی جانی چاہیے۔

تحقیق میں کہا گیا ہے کہ اس سال دنیا 0.28 فیصد زیادہ پرامن ہے۔ محقیقن نے اس کی وجہ کشیدگی کی ریاستی پذیرائی میں کمی بتائی جس میں تشدد، ماورائے عدالت قتل کے واقعات، اور دنیا میں قتل کی شرح میں کمی ہے۔

امریکی اور برطانوی فوجیوں کے افغانستان سے بڑی تعداد میں لوٹنے کا اثر میں رپورٹ میں دیکھا گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption شام میں جاری جنگ کے آغاز سے اب تک یہ پہلا موقع ہے کہ اس انڈیکس میں بہتری آئی ہے

مگر عالمی رجحان کے برعکس امریکہ میں داخلی طور پر قتل کی شرح اور جرائم کے حوالے سے تاثر میں اضافے کے باعث امن کی صورتحال بگڑی۔

ادھر اگرچہ یورپ میں دہشت گردی میں اضافہ ہوا تاہم یہ پھر بھی دنیا کا پرامن ترین علاقہ رہا۔

دنیا میں 23 ممالک میں دہشت گردی کی وجہ سے ہلاکتیں ہوئیں۔ ان میں ڈنمارک، سوئیڈن، فرانس اور ترکی بھی شامل ہیں۔

محققین کا کہنا ہے کہ دنیا کے 60 فیصد ممالک میں گذشتہ دس سال کے مقابلے میں دہشتگردی کے واقعات اضافہ ہوا ہے۔

اس تحقیق میں برطانیہ میں ہونے والے مانچسٹر حملے سے پہلے تک کی معلومات کو شامل کیا گیا ہے اور اس حملے کو شامل نہیں کیا گیا۔

گذشتہ پانچ سالوں سے مسلسل شام امن کے حوالے سے بدترین ملک ہے۔ جانہ جنگی کے آغاز سے قبل اس کا بدامنی کے لحاظ سے 65 واں درجہ تھا۔

اس کے علاوہ دیگر بدامن ترین ممالک میں افغانستان، عراق، جنوبی سوڈان اور یمن شامل ہیں۔

علاقائی لحاظ سے مشرقِ وسطیٰ اور شمالی افریقہ بدامن ترین خطہ رہا۔

2008 سے اب تک اور اس سال بھی آئیس لینڈ دنیا کا پرامن ترین ملک رہا۔ اس کے ساتھ نیوزی لینڈ، پرتگال، آسٹریا اور ڈینمارک میں انتہائی پرامن ترین رہے۔

اسی بارے میں