’یورپی یونین بریگزٹ مذاکرات کے لیے تیار ہے‘

مرکل تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption بریگزٹ کے سلسلے میں مذاکارات 19 جون کو شروع ہونا ہیں۔

جرمن چانسلر اینگلا میرکل کا کہنا ہے کہ ان کے خیال میں برطانیہ کی یورپی یونین سے علیحدگی کے سلسلے میں مذاکرات کے آغاز میں کوئی رکاوٹ نہیں ہے۔

یاد رہے جمعرات کو برطانوی انتخابات میں وزیراعظم ٹریزا مے کی جماعت پارلیمنٹ میں اکثریت حاصل کرنے میں ناکام رہی تھیں۔

جرمن چانسلر کا کہنا تھا کہ برطانیہ مجوزہ ٹائم ٹیبل کا احترام کر سکے گا۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ یورپی یونین مذاکرات کے لیے تیار ہے۔

واضح رہے کہ بریگزٹ کے سلسلے میں مذاکرات 19 جون کو شروع ہونا ہیں۔

برطانوی انتخابات: ٹریزا مے کا نئی حکومت بنانے کا اعلان

فوری انتخابات سے بریگزٹ میں آسانی ہو گی: ٹریزا مے

جمعرات کے برطانوی انتخابات میں ٹریزا مے کی جماعت نے 13 سیٹیں کھو دی ہیں جس کے بعد پارلیمنٹ میں ان کی اکثریت ختم ہوگئی اور مذاکرات کے حوالے سے بے یقینی پیدا ہوگئی ہے۔

ٹریزا مے نے انتخابات کی کال اس لیے دی تھی تاکہ وہ بریگزٹ کے حوالے سے اپنے لائحہ عمل کے لیے واضح مینڈیٹ حاصل کر سکیں۔

وہ کہہ چکی ہیں کہ برطانیہ کے یورپی یونین چھوڑنے کے حوالے سے اہم مذاکرات دس روز بعد مقرر کردہ وقت پر ہی شروع ہوں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption ٹریزا مے کو انتخابات میں سادہ اکثریت بھی نہیں مل سکی

اینگلا میرکل نے یہ بیان اس وقت دیا جب وہ تجارتی امور کے حوالے سے میکسکو کے صدر سے میکسکو سٹی میں جمعے کے روز ملاقات کر رہی تھیں۔

ان کا کہنا تھا کہ ’ہم مذاکرات جلف کرنا چاہتے ہیں اور اس وقت تک کوئی ایسے اشارے نہیں ہیں کہ مذاکرات وقت پر شروع نہیں سو سکتے۔

’ہمیں امید ہے کہ برطانیہ مذاکرات شروع ہونے کے بعد بھی ایک اچھا ساتھی رہے گا۔ برطانیہ چاہے یورپی یونین کا حصہ نہ ہو، وہ یورپ کا تو حصہ رہے گا۔‘

تاہم ان کا کہنا تھا کہ یورپی یونین ان 27 ممالک کے مفادات سامنے لائے گا جو کہ مستقبل میں یورپی یونین کا حصہ ہوں گے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں