سعودی عرب: حکومت کی جانب سے سگریٹ اور مشروبات پر 'گناہ ٹیکس' عائد

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سعودی حکومت کے نئے ٹیکس کے بعد سگریٹ کی قیمت دگنی ہو گئی ہے

سعودی عرب کی حکومت کی جانب سے لگائے گئے ایک نئے ٹیکس نے سگریٹ نوشوں کی زندگی دشوار کر دی ہے کیونکہ اس ٹیکس کی مد میں سگریٹ کی قیمت دوگنی ہو گئی ہے۔

سعودی میڈیا میں شائع ہونے والی خبروں کے مطابق حکومت نے 'سِن ٹیکس' یعنی 'گناہ ٹیکس' کے نام سے ایک نیا ٹیکس عائد کیا ہے جس سے سگریٹ اور سافٹ ڈرنکس کی مصنوعات کی قیمت بڑھ گئی ہیں۔

عرب نیوز سے ہی بات کرتے ہوئے جدہ میں مقیم پاکستانی فیضان حیدر نے کہا کہ وہ اپنے کھانے کے خرچے کو کم کر لیں گے لیکن سگریٹ نوشی نہیں ختم کریں گے۔ ’میں کھانا پینا کم کر دوں گا لیکن میں سگریٹ نہیں چھوڑ سکتا۔‘

یہ ٹیکس اس پروگرام کا حصہ ہے جس کے تحت نہ صرف سعودی عرب بلکہ خلیج کے خطے میں واقع دوسرے ممالک میں بھی یہ ٹیکس لاگو ہوگا جس میں ان اشیا پر ٹیکس لگایا جائے گا جو مضر صحت ہیں۔

اس ٹیکس کی مدد سے تیل کی گرتی ہوئی قیمتوں کی وجہ سے پیدا ہونے والے مالیاتی فرق کو پورا کرنے کی کوشش کی جائے گی۔

مقامی سعودی میڈیا کے مطابق اس ٹیکس کے عائد ہونے کے بعد سے تاجروں نے ان مصنوعات کی ذخیرہ اندوزی شروع کردی ہے تاکہ قیمتیں بڑھنے کے بعد وہ زیادہ منافع کما سکیں۔

سعودی حکومت کی جنرل اتھارٹی آف زکوۃ اینڈ ٹیکس کے ترجمان مہند ال مادی نے عرب نیوز سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ ان کے دفتر نے اس ٹیکس کے بارے میں کاروباری سیکٹر کو معلومات فراہم کردی ہیں اور ساتھ ساتھ اس کے لیے وہ ورکشاپ بھی منعقد کر رہے ہیں۔

یاد رہے کہ خلیجی ممالک کی تنظیم گلف کوآپریشن کونسل کے ملکوں میں 2018 سے چند مصنوعات پر پانچ فیصد اضافی ٹیکس لگایا جائے گا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں